Tuesday, May 28, 2024

خواجہ سراؤں کی تعلیمی پالیسی نافذ کرنے کا فیصلہ

- Advertisement -

زرائع کے مطابق، جمعرات کوسندھ حکومت نے اساتذہ کے لائسنس جاری کرنے کے بعد پہلی خواجہ سراؤں (ٹرانس جینڈر) کی تعلیمی پالیسی کو نافذ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق خواجہ سراؤں کی تعلیمی پالیسی کا مسودہ حتمی مراحل میں داخل ہو گیا ہے۔ سندھ کے وزیر تعلیم سردار شاہ کے مطابق، خواجہ سراؤں کو تعلیمی مواقع تک مساوی رسائی حاصل ہونی چاہیے۔

انہوں نے یہ کہتے ہوئے جاری رکھا کہ غیر جنس پرست لوگوں کو بھی اسکالرشپ ملے گی۔ نئی پالیسی کی بدولت ٹرانس جینڈر لوگوں کو تعلیمی مواقع تک آسانی سے رسائی حاصل ہو گی۔

انگلش میں پڑھنے کے لئے یہاں کلک کریں 

وفاقی حکومت نے پہلے کہا تھا کہ بے نظیر کفالت پروگرام اب ٹرانس جینڈر کو بھی شامل کرے گی ۔ بے نظیر انکم سپورٹ پراجیکٹ (بی آئی ایس پی) کی چیئر وومن شازیہ مری نے ٹوئٹ کیا تھا کہ پہلی بار خواجہ سراؤں کو پراجیکٹ میں داخلہ دیا گیا ہے۔

ان کے مطابق، خواجہ سرا ہمارے معاشرے کا ایک لازمی حصہ ہیں، اور ان کی حفاظت کرنا حکومت کا فرض ہے۔ مری نے ٹرانس جینڈر لوگوں پر زور دیا کہ وہ شناختی کارڈ کے لیے درخواست دیں اور فوائد حاصل کرنے کے لیے پروگرام میں اپنا اندراج کریں۔

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں