Saturday, June 22, 2024

نیب نے عمران خان کا 14روزہ جسمانی ریمانڈ مانگ لیا۔

- Advertisement -

قومی احتساب بیورو (نیب) نے بدھ کو پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین عمران خان کے 14 روزہ جسمانی ریمانڈ کی استدعا کی کیونکہ القادر ٹرسٹ کیس کی سماعت معمولی تاخیر کے بعد شروع ہوئی۔

ذرائع نے دعویٰ کیا کہ عمران خان کے چار سے پانچ روز تک نیب کی تحویل میں رہنے کا امکان ہے، کیونکہ بیورو نے عدالت سے درخواست کی کہ قانون کے تحت ان کے زیادہ سے زیادہ ریمانڈ کی اجازت دی جائے۔

سماعت نیو پولیس گیسٹ ہاؤس، پولیس لائنز میں شروع ہوئی، جہاں منگل کو پی ٹی آئی سربراہ کو گرفتاری کے بعد حراست میں لے لیا گیا۔ مقدمے کی سماعت کے لیے احاطے کو عدالت قرار دیا گیا تھا۔

ذرائع کے مطابق عمران خان کی نمائندگی وکلا خواجہ حارث، فیصل چوہدری، علی گوہر اور علی بخاری کررہے ہیں۔

اس سے قبل وکلا نے سماعت شروع ہونے سے قبل عمران سے ملاقات سے انکار کر دیا تھا۔ تاہم کارروائی کے وقفے کے دوران انہوں نے اپنے وکلاء سے مشاورت کی۔

جج محمد بشیر القادر ٹرسٹ کیس کی سماعت کر رہے ہیں جس میں الزام لگایا گیا ہے کہ پی ٹی آئی کے سربراہ اور ان کی اہلیہ بشریٰ بی بی نے ایک رئیل اسٹیٹ ڈویلپر سے 6 ارب روپے سے زائد رشوت وصول کی تاکہ 160 ملین برطانوی پاؤنڈ حکومت پاکستان کو واپس بھیجے جائیں۔

انگلش میں پڑھنے کے لئے یہاں کلک کریں

گیسٹ ہاؤس کو عدالت قرار دیا گیا۔

اس سے قبل گیسٹ ہاؤس کو عدالت قرار دیا گیا تھا جہاں عمران خان کے مقدمے کی سماعت ہوگی۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ نیب اور توشہ خانہ سے متعلق مقدمات کی سماعت ایف ایٹ کورٹ کمپلیکس اور جوڈیشل کمپلیکس جی 11/4 اسلام آباد کی بجائے نیو پولیس گیسٹ ہاؤس، پولیس لائنز ہیڈ کوارٹر میں ہوگی۔

اس حوالے سے نوٹیفکیشن بھی جاری کر دیا گیا ہے۔ نوٹیفکیشن کے مطابق نیب اور توشہ خانہ کیسز کی سماعت کرنے والے ججز پولیس لائنز ہیڈ کوارٹر H11/1 اسلام آباد جائیں گے۔

واضح رہے کہ قومی احتساب بیورو (نیب) کی ایک ٹیم نے منگل کو رینجرز کی مدد سے سابق وزیراعظم کو القادر ٹرسٹ کیس میں حراست میں لیا تھا، جس کے بعد اسلام آباد ہائی کورٹ کو نوٹس لینے کا اشارہ کیا گیا تھا۔ نیب نے موقف اپنایا کہ عمران خان نے انہیں بھیجے گئے نوٹسز کا جواب نہیں دیا اور ان کی گرفتاری ‘مکمل طور پر قانون کے مطابق اور نیب آرڈیننس کے مطابق’ ہے۔

عمران خان کے کزن سیف اللہ نیازی نے بتایا کہ پی ٹی آئی سربراہ کو اسلام آباد ہائی کورٹ کے احاطے سے گرفتار کیا گیا تھا جہاں وہ دو مقدمات میں پیش ہوئے تھے۔ انہیں نیب راولپنڈی کے دفتر منتقل کر دیا گیا۔ آپریشن میں نیب ٹیم کو پاکستان رینجرز کے اہلکاروں نے مدد فراہم کی۔

نیب کی تحویل میں

ذرائع نے دعویٰ کیا کہ عمران خان کے چار سے پانچ روز تک نیب کی تحویل میں رہنے کا امکان ہے، کیونکہ بیورو نے عدالت سے درخواست کی کہ قانون کے تحت ان کے زیادہ سے زیادہ ریمانڈ کی اجازت دی جائے۔

ان کا کہنا تھا کہ نیب حکام انہیں کم از کم چار سے پانچ دن تک حراست میں رکھنے کی پوری کوشش کریں گے۔ قومی احتساب آرڈیننس 1999 میں نئی ترامیم کے تحت جسمانی ریمانڈ کی مدت 90 دن سے کم کر کے 14 دن کر دی گئی ہے جو عدالت نے دی تھی۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ احتساب نگراں عدالت سے 14 روزہ جسمانی ریمانڈ کی استدعا کرے گا۔

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں