Thursday, May 30, 2024

عدالت نے عمران خان کی گرفتاری کو قانونی قرار دے دیا

- Advertisement -

اسلام آباد: اسلام آباد ہائی کورٹ (آئی ایچ سی) نے سابق وزیراعظم اور پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین عمران خان کی گرفتاری کو ’قانونی‘ قرار دے دیا۔

القادر ٹرسٹ کیس میں عمران خان کی گرفتاری کو اسلام آباد ہائی کورٹ (آئی ایچ سی) نے ’قانونی‘ قرار دیا تاہم اسلام آباد کے آئی جی پی اور سیکرٹری داخلہ کو توہین عدالت کے لیے سمن بھیجے گئے۔

تفصیلات کے مطابق اسلام آباد ہائی کورٹ نے محفوظ کیا گیا فیصلہ سناتے ہوئے سیکرٹری داخلہ اور آئی جی اسلام آباد کو توہین عدالت کے نوٹس جاری کر دیئے۔

انگلش میں پڑھنے کے لئے یہاں کلک کریں

عمران خان کی جانب سے گرفتاری کے خلاف دائر درخواست پر اسلام آباد ہائی کورٹ (آئی ایچ سی) کے چیف جسٹس جسٹس عامر فاروق نے سماعت کی۔ چیف جسٹس کے سامنے بنیادی پراسیکیوٹر اور قومی احتساب بیورو (نیب) کے ڈائریکٹر جنرل کو دیکھا گیا۔

نیب حکام نے بتایا کہ انہوں نے وزارت کو خط لکھا تھا جو پی ٹی آئی کے مرکزی رہنما کی گرفتاری کے اندر ہے۔ اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ کوئی بھی شخص قانون سے بالاتر نہیں۔ اس نے عدالت میں افراتفری کے نتیجے میں زخمی ہونے والے وکیلوں کو بھی شامل کیا۔

مزید خاص طور پر، (آئی ایچ سی) کے چیف جسٹس  نے نوٹ کیا کہ جج اس بات کا تعین کر رہے ہیں کہ آیا عمران خان کی گرفتاری قانونی تھی یا غیر قانونی۔ کون سا قانون اجازت دیتا ہے کہ کسی شخص کو حکام کے ذریعے بڑی عدالت میں حراست میں لیا جائے؟

(آئی ایچ سی) چیف جسٹس نے فیصلہ محفوظ کر لیا جو کچھ دیر میں قائم ہو جائے گا۔

مزید تفصیلات:

قبل ازیں اسلام آباد ہائی لیگل نے ملک گیر احتساب بیورو کے ڈائریکٹر جنرل اور پراسیکیوٹر کو سابق وزیر کے بعد طلب کیا، یہ یقینی طور پر ہائی کورٹ کے احاطے سے اہم گرفتاری ہے۔

جسٹس فاروق نے حکومت کو حکم دیا کہ وہ فوری طور پر عدالت کو عمران کی گرفتاری کے ذمہ دار شخص کی شناخت کے ساتھ ساتھ اس کے اردگرد کے حالات سے بھی آگاہ کرے۔

واضح رہے کہ عمران خان کو قومی احتساب بیورو (نیب) نے القادر ٹرسٹ کیس میں گرفتار کیا تھا۔

پی ٹی آئی کے سربراہ کو رینجرز ملازمین نے حراست میں لے لیا۔ جو ملک گیر احتساب بیورو (نیب) کے وارنٹ پر کارروائی کر رہے تھے۔ اسلام آباد کے احاطے سے لمبا قانونی جس میں وزیر اعظم یہ یقینی طور پر سابقہ جا چکے ہیں ان کے خلاف متعدد حالات میں ضمانت پر دستخط کرائے گئے۔

نیب نوٹس کے مطابق، خان کے وارنٹ یکم مئی کو چیئرمین نیب لیفٹیننٹ جنرل (ر) نذیر احمد بٹ نے جاری کیے تھے۔

ٹوئٹر پر وزیر داخلہ رانا ثناء اللہ نے کہا کہ عمران نے انکوائری میں متعدد نوٹسز دیئے جانے کے باوجود جج کے سامنے پیش ہونے میں کوتاہی کی۔

انہوں نے کہا کہ یہ گرفتاری قومی احتساب بیورو نے خزانے کو نقصان پہنچانے پر کی ہے یہ یقیناً قومی ہے۔

ابتدائی اطلاعات کے مطابق پی ٹی آئی چیئرمین کو راولپنڈی میں ملک گیر احتساب بیورو (نیب) کے دفتر لے جایا گیا۔

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں