Wednesday, April 24, 2024

کراچی میں زکوٰۃ کی تقسیم کے دوران 12 افراد جاں بحق ہوگئے۔

- Advertisement -

کراچی: کراچی کے علاقے سائٹ ایریا میں نارس چوراہے پر ایک فیکٹری کے احاطے کے اندر زکوٰۃ کی تقسیم کے دوران بھگدڑ میں جمعہ کو کم از کم 12 افراد ہلاک اور پانچ زخمی ہوگئے۔

یہ واقعہ اس وقت پیش آیا جب لوگ شہر کے صنعتی علاقے میں ایک ڈائینگ فیکٹری میں زکوٰۃ کی تقسیم کے لیے جمع تھے، یہ خیراتی کاموں کا حصہ ہے جسے کراچی کے لوگ ہر رمضان میں ضرورت مندوں کی مدد کے لیے کرتے ہیں۔

ریسکیو ذرائع اور پولیس حکام نے بتایا کہ واقعے میں جاں بحق ہونے والوں میں 8 خواتین اور 3 بچے شامل ہیں۔

ریسکیو ذرائع نے بتایا کہ بھگدڑ کے دوران چھ افراد بے ہوش بھی ہوگئے۔ دریں اثنا، پولیس حکام نے بتایا کہ جب راشن تقسیم کیا جا رہا تھا تو وہاں لوگوں کی بڑی تعداد جمع تھی۔

انگلش میں خبریں پڑھنے کے لئے یہاں کلک کریں

ریسکیو ذرائع کے مطابق فیکٹری میں نالے میں گرنے والے بہت سے لوگ مر گئے۔ اس کے علاوہ عینی شاہدین نے میڈیا کو بتایا کہ لوگوں کو زکوٰۃ کی تقسیم کے لیے بلایا گیا تھا۔

جاں بحق افراد کی تعداد کے بارے میں اپ ڈیٹ کرتے ہوئے ایدھی ذرائع نے بتایا کہ عباسی شہید اسپتال میں نو لاشیں لائی گئیں، جب کہ دو کو سول اسپتال پہنچایا گیا۔

فیصل ایدھی نے بتایا کہ عباسی شہید اسپتال میں لائے گئے تمام مرنے والوں میں خواتین بھی شامل ہیں جن میں3 چھوٹی بچیاں بھی شامل ہیں۔

گورنر سندھ کامران ٹیسوری نے واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے کمشنر کراچی محمد اقبال میمن سے رپورٹ طلب کرلی ہے۔ گورنر نے واقعہ میں قیمتی جانوں کے ضیاع پر دکھ کا اظہار بھی کیا۔

وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے بھی بھگدڑ کا نوٹس لیتے ہوئے کمشنر سے رپورٹ طلب کرلی۔ وزیراعلیٰ مراد نے کہا، “انتظامیہ کو راشن کی تقسیم اور فلاح و بہبود کی کوششوں کے بارے میں صحیح طور پر رپورٹ کرنی چاہیے۔

بعد میں ایک بیان میں، وزیر اعلیٰ نے مرنے والوں کے لواحقین کے لیے 500,000 روپے اور واقعے میں زخمی ہونے والوں کے لیے 100,000 روپے کا اعلان کیا۔

پولیس نے سات افراد کوحراست میں لے لیا۔

ایس پی محمد مغیث ہاشمی نے صحافیوں سے کہا کہ پولیس نے تصدیق کی کہ یہ واقعہ بھگدڑ کی وجہ سے پیش آیا، انہوں نے مزید کہا کہ مقامی پولیس اسٹیشن کو زکوٰۃ کی تقسیم سے قبل اطلاع نہیں دی گئی تھی۔

ایس پی نے بتایا کہ اب تک سات افراد کو گرفتار کر کے تفتیش شروع کر دی گئی ہے۔

مرنے والوں کی تعداد میں اضافے کا خدشہ ظاہر کرتے ہوئے انہوں نے انکشاف کیا کہ بھگدڑ کے دوران پانی کی لائن بھی پھٹ گئی جس نے صورتحال کو مزید بگاڑ دیا۔

ایس ایس پی کیماڑی نے تصدیق کی کہ حادثے کی جگہ پر کرنٹ لگنے کے کوئی شواہد نہیں ملے اور تمام افراد بھگدڑ کے نتیجے میں ہلاک ہوئے۔

پولیس اہلکار نے بھی تصدیق کی کہ نالے کی دیوار گرنے کا کوئی واقعہ نہیں ہوا۔ انہوں نے مزید کہا کہ جس وقت بھگدڑ مچی اس مقام پر 400 سے زیادہ لوگ جمع تھے۔

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں