Thursday, May 30, 2024

افغان طالبان کی فائرنگ سے ایک فوجی زخمی

- Advertisement -

پشاور: اعلیٰ حکومتی اور سیکیورٹی حکام کے مطابق، افغان طالبان نے پیر کو طورخم بارڈر پر پاکستانی سیکیورٹی اہلکار کی چوکی پر فائرنگ کی جس سے ایک فوجی زخمی ہوگیا۔کیونکہ افغان حکومت نے پاکستان کے لیے سرحد کو دوسرے روز بھی بند رکھا۔

طورخم بارڈر پر سینئر سرکاری عہدیداروں نے اطلاع دی کہ افغان طالبان سے مریض کو داخل ہونے کی اجازت دینے کے بعد ان کے ساتھیوں سے درست سفری اسناد پیش کرنے کا مطالبہ کیا گیا افغان سرحدی محافظوں نے یہ معاملہ اٹھایا اور کہا کہ پاکستانی حکام مریضوں اور ان کے ساتھیوں کوویزے یا دیگر سرکاری سفری اسناد کے بغیر پشاور یا کسی اور جگہ علاج کے لیے پاکستان میں داخل ہونے کی اجازت دیں۔

انگلش میں خبریں پڑھنے کے لئے یہاں کلک کریں 

انہوں نے کہا کہ سرحد پر موجود اہلکاروں نے افغان حکام کو قائل کرنے کی کوشش کی لیکن انہوں نے ان کی بات نہیں سنی،اور انہوں نے گاڑیوں کو افغانستان سے پاکستان میں داخل ہونے کی اجازت نہیں دی۔

سرحد بند ہونے کے بعد مختلف سامان سے لدے سینکڑوں ٹرک اور قانونی دستاویزات رکھنے والے افغان باشندے سرحد کے دونوں جانب پھنسے ہوئے ہیں۔ پاکستانی حکام کے مطابق افغان بارڈر سیکیورٹی فورسز نے پہاڑی چوٹیوں پر واقع ایوب پوسٹ کو گولی مار کر نشانہ بنایا جس سے ایک فوجی زخمی ہوگیا۔

تفصیلات 

زخمی سپاہی کو فوراً اسپتال لے جایا گیا، جہاں اس کی حالت بہتر بتائی گئی۔ پاکستانی سیکیورٹی فورسز کی جانب سے مشتبہ حملے کے مقامات پر جوابی کارروائی میں بھاری گولہ باری کا استعمال کیا گیا تاہم یہ واضح نہیں ہے کہ آیا افغان سیکیورٹی فورسز کو کوئی جانی نقصان پہنچا یا نہیں۔

طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نےصورتحال پر تبصرہ کرنے سے گریز کیا۔ طورخم بارڈر کے قریب حکومتی نمائندوں اور مقامی لوگوں نے بتایا کہدونوں سکیورٹی دستوں کے درمیان آدھے گھنٹے تک فائرنگ کا تبادلہ ہوا۔

سینئر حکام نے دی نیوز کو بتایا کہ بیک ڈور چینلز کا استعمال دونوں پڑوسی ممالک کے درمیان کشیدگی کو کم کرنے اور سرحد کو کھولنے کے لیے کیا جا رہا تھا، لیکن جب تک یہ آئٹم داخل کیا گیا تھا سرحد بند تھی۔پاکستانی حکام نے لازمی قرار دیا ہے کہ ان کے پاس درست سفری دستاویزات ہونا چاہیے یہ امید ظاہر کی گئی کہ منگل تک سرحد دوبارہ کھل جائے گی۔

ان کے مطابق سرحد کے قریب ایک ہسپتال قائم کیا گیا ہے جہاں طبی عملے کے ذریعے مریضوں کا اچھی طرح جائزہ لیا جاتا ہے اور اگر علاج ضروری ہو تو انہیں بہتر طبی امداد کے لیے پشاور کے ہسپتالوں میں بھیجا جاتا ہے۔اگر  حالت  خراب ہو تو نازک مریضوں کے لیے کسی ویزا یا دیگر سرکاری سفری کاغذات کی ضرورت نہیں ہے۔

پشاور پولیس لائنز خودکش حملے کے بعدحفاظتی اقدامات مزید سخت کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔ تاہم، یہ الزامات ہیں کہ افغانستان میں کچھ لوگوں کو قانونی دستاویزات کے بغیر بھی پاکستان میں داخل ہونے کے لیے رقم ادا کی جاتی ہے۔ طورخم کے باشندوں کا کہنا تھا کہ وہ گزشتہ چند دنوں سے سرحد پر کشیدہ صورتحال کے ردعمل سے خوفزدہ ہیں۔

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں