Tuesday, May 28, 2024

ابو موسیٰ جابر بن حیان

- Advertisement -

عصری فارمیسی کے علمبرداروں میں سے ایک ابو موسیٰ جابر بن حیان العزدی جنہیں الحرانی اور الصوفی کے نام سے بھی جانا جاتا ہے انہیں عرب کیمیا کا باپ سمجھا جاتا ہے۔

جابر بن حیان یورپیوں میں گیبر کے نام سے جانے جاتے تھے۔ آپ 721ء میں ایرانی  شہر طوس میں صوبہ خراسان میں پیدا ہوئے۔

جابر بن حیان کا خاندان 

اموی دور میں ان کے والد حیان العزدی عرب کے ایک یمنی آزاد قبیلے سے تعلق رکھنے والے کیمیا دان تھے اور انکی رہائش کوفہ عراق میں تھی۔

انگلش میں خبریں پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

حیان نے امویوں کے خلاف عباسیوں کی بغاوت کی حمایت کی اور ایران چلے گے جہاں جابر پیدا ہوے تھے۔جیسے ہی حیان کو امویوں نے پکڑ کر قتل کر دیا یہ خاندان یمن فرار ہو گیا۔جابر نے یمن میں عالم حربی الحمیری کی سرپرستی میں تعلیم حاصل کی۔ عباسی خاندان کے اقتدار سنبھالنے کے بعد وہ واپس کوفہ واپس آگئے۔

یہ دعویٰ کیا جاتا ہے کہ وہ امام جعفر الصادق کے شاگرد تھے۔ انہوں نے کیمسٹری کیمیا فارمیسی، فلسفہ، فلکیات اور طب سیکھی۔وہ خلیفہ ہارون الرشید کے دور میں درباری کیمیا دان بن گے تھے ۔ آپ نے 815ء میں 94 سال کی عمر میں کوفہ میں وفات پائی۔

جابر بن حیان کی تصنیف 

بعض مصنفین کی طرف سے یہ دعویٰ کیا جاتا ہے کہ وہ فلسفہ پر 300 کتابیں، مکینیکل ڈیوائزز پر 1300 کتابیں اور کیمیا پر سینکڑوں کتابیں تصنیف کرنے والے ایک عظیم مصنف تھے۔

عربی تصانیف کی بڑی مقدار کے مصنف، جن میں سے بہت سے ناقابل یقین حد تک دلکش ہیں، جابر ابن حیان کے نام سے جانا جاتا ہے۔ دوسرے مصنفین نے قیاس کیا کہ یہ کارپس جبیرینم – جس کے 500 سے زیادہ عنوانات ہیں جابر نے نہیں لکھا تھا بلکہ ان کے شاگردوں یا پیروکاروں نے اس میں اضافہ کیا اور ان اضافے کو جابر مکتب کیمیا کا کام سمجھا گیا۔ جبکہ کوچھ کا خیال تھا کہ ان میں سے باز کتابیں جابر نے لکھی ہیں، جب کہ دیگر دو صدیوں کے عرصے میں بعد میں لکھی گئیں۔

کارپس جبریانم کی کتابوں میں سے یہ ہیں:

کتاب الرحمۃ الکبیر رحمۃ اللہ علیہ
قطب المیہ و الثنا اشعرہ ایک سو بارہ کتابیں
کتاب الصبیعین ستر کی کتاب
کتب الموزین کتابیں میزان
کتاب الخمس میا پانچ سو کتابیں

قرون وسطیٰ میں ان میں سے بہت سی کتابوں کا لاطینی زبان میں ترجمہ کیا گیا۔ ان کی دیگر اہم کتابوں میں کیمیا کے عظیم فن پر کتاب الزہرہ تھی۔جابر نے یہ کتاب عباسی خلیفہ ہارون الرشید کو وقف کی۔ کیمسٹری پر ان کی کتابیں، بشمول ان کی کتاب الکیمیا ، کتاب الصبیین ستر کتابیں، لاطینی اور مختلف یورپی زبانوں میں بھی ترجمہ کی گئیں۔ یہ دعویٰ کیا جاتا ہے کہ انگریزی لفظ گببرش جس کا مطلب ہے بکواس اس کے نام گیبر سے ماخوذ ہے اور خیال کیا جاتا ہے کہ اس کا تعلق کوڈ میں ان کی تحریروں سے ہے۔

جابر کو کیمیا میں تجرباتی طریقہ کار متعارف کرانے اور جدید کیمسٹری میں استعمال ہونے والے متعدد کیمیائی عمل کی ایجاد کا سہرا جاتا ہے۔ ان میں کرسٹلائزیشن، کیلکیشنز، سبلیمیشن اور بخارات شامل ہیں، تیزاب کی ترکیب ہائیڈروکلوری، نائٹرک سائٹرک، ایسٹک اور ٹارٹیک ایسڈ، اور اس کی سب سے بڑی ایجاد، الیمبک انبائق کا استعمال کرتے ہوئے کشید کرنا۔ دیگر کامیابیوں میں مختلف دھاتوں کی تیاری، سٹیل کی ترقی، کپڑے کو رنگنا اور چمڑے کی ٹیننگ، واٹر پروف کپڑے کی وارنش، شیشہ سازی میں مینگنیز ڈائی آکسائیڈ کا استعمال، زنگ لگنے سے بچنا اور پینٹ اور چکنائی کی شناخت شامل ہیں۔ انہوں نے سونے کو تحلیل کرنے کے لیے ایکوا ریجیا بھی تیار کیا۔

جابر نے قدرتی عناصر اسپرٹ کے لیے تین قسمیں تجویز کیں، جو گرم ہونے پر بخارات بن جاتے ہیں۔ دھاتیں جیسے سونا، چاندی، سیسہ، لوہا اور تانبا؛ اور پتھر جو پاؤڈر میں تبدیل ہو سکتے ہیں۔

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں