Thursday, May 30, 2024

پی ٹی آئی کارکنان کی گرفتاریوں میں تیزی

- Advertisement -

مختلف اضلاع میں درج کیے گئے تشدد کے مقدمات میں پنجاب بھر سے پاکستان تحریک انصاف کے کارکنوں کی گرفتاریوں میں تیزی آتے ہوے مزید 178 کارکنوں کو حراست میں لے لیا گیا۔

پنجاب پولیس کے ترجمان کے مطابق، پولیس کی ان گرفتاریوں کا مقصد اہم انفراسٹرکچر، قانون نافذ کرنے والے اداروں کے اہلکاروں اور گاڑیوں کے ساتھ ساتھ نجی رہائش گاہوں اور انفرادی شہریوں کی گاڑیوں اور ڈھانچے پر حملوں کے ذمہ دار افراد کو حراست میں لینا تھا۔

ان کے مطابق، 9 مئی کو پی ٹی آئی کے کارکنوں کے سڑکوں پر آنے اور پرتشدد کارروائیاں شروع کرنے کے بعد سے پنجاب میں مجموعی طور پر 3,368 افراد کو گرفتار کیا جا چکا ہے۔

انگلش میں خبریں پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

ان کے مطابق، پی ٹی آئی چارجڈ ہجوم نے لاہور اور پنجاب کے دیگر علاقوں پر حملہ کیا، جس میں 162 سینئر اور جونیئر پولیس اہلکار زخمی ہوئے۔

ترجمان نے بتایا کہ انہوں نے تھانوں سمیت 22 سرکاری اور نجی تنصیبات کے ساتھ ساتھ پولیس کی مجموعی طور پر 94 گاڑیوں کو نقصان پہنچایا اور جلا دیا۔

پولیس کی کل گاڑیوں میں سے لاہور میں 22، فیصل آباد میں 21 اور راولپنڈی میں 19 گاڑیوں کو نذر آتش کر دیا گیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ مشتعل ہجوم کے خلاف قانونی کارروائی کا آغاز کیا جا رہا ہے جس پر گاڑیوں، نجی اور سرکاری املاک کو نذر آتش کرنے اور لوگوں کو تشدد کا نشانہ بنانے کا الزام ہے۔ سرکاری عمارتوں پر حملہ کیا، اور پرتشدد جرائم کا ارتکاب کیا۔

لاہور میں حملوں کے دوران، اس نے دعویٰ کیا کہ مجرموں نے پولیس کی 22 گاڑیوں کو آگ لگا دی۔

انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی سے تعلق رکھنے والے مجرموں کے خلاف مختلف تھانوں میں کل 34 ایف آئی آر درج کی گئی ہیں۔

ان میں سے سولہ کینٹ ڈویژن، دس ماڈل ٹاؤن، سات سول لائنز اور ایک صدر ڈویژن سے رپورٹ کیا گیا۔

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں