Friday, February 23, 2024

آسٹریلیا چھوٹے تابکار کیپسول کی تلاش کر رہا ہے۔

- Advertisement -

ریوٹینٹو لمیٹڈ  نے پیر کے روز ایک چھوٹے سے تابکار کیپسول کے ضائع ہونے پر معافی نامہ جاری کیا جس کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ وہ ٹرک سے گرا تھا جس نے مغربی آسٹریلیا کے کچھ حصوں میں تابکاری کا الرٹ جاری کر دیا تھا۔

 یہ کیپسول لوہے کے فیڈ کی کثافت کی پیمائش کے لیے استعمال ہونے والے گیج کا حصہ تھا۔ لکین یہ بات واضح نہیں کہ آسٹریلیا کا یہ تابکار کیپسول کتنے عرصے سے غائب ہے،

١٢ جنوری کو، ایک ماہر ٹھیکیدار نے ریو کی گودائی- دری کان کی جگہ سے گیج اٹھایا۔ ٢٥ جنوری کو، گیج ٹوٹا ہوا پایا گیا، جب اسے معائنہ کے لیے کھولا گیا تھا تو اس کے چاربولٹ میں سے ایک غائب تھا اور گیج سے پیچ بھی غائب تھا.

انگلش میں پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

حکام کا خیال ہے کہ ٹرک کی وائبریشن کی وجہ سے پیچ اور بولٹ ڈھیلے ہو گئے اور پھر ٹرک میں ایک خلا سے گیج سے تابکار کیپسول پیکیج سے باہر آ گرا.

متحدہ سلطنت یونائیٹڈ کنگڈم  کے حکام کو اب ٹرک کے ١٤٠٠ کلو میٹر سفر کے ساتھ ساتھ نیومین کے شمال میں، دور دراز کے کمبر لے علاقے کے ایک چھوٹے سے قصبے سے، پرتھ کے شمال مشرقی مضافاتی علاقوں تک اسے تلاش کرنے کا کام سونپا گیا ہے –

“ہم اس واقعے پر بہت فکر مند ہیں۔ ریو کے لوہے کے ڈویژن کے سربراہ سائمن ٹروٹ نے ایک بیان میں کہا، “ہم تسلیم کرتے ہیں کہ یہ واضح طور پر بہت تشویشناک ہے اور مغربی آسٹریلوی کمیونٹی میں اس کی وجہ سے ہونے والی تشویش کے لیے معذرت خواہ ہیں۔”

سیزیم-١٣٧ ، جو ١٠  ایکس رے فی گھنٹہ کے برابر تابکاری خارج کرتا ہے، ایک چاندی کے کیپسول میں رکھا گیا ہے جس کا قطر ٦ملی میٹر اور لمبا ہے۔

حکام کا مشورہ

آسٹریلیا کے کیپسول سے عام لوگوں کے لیے خطرہ معمولی ہے، لیکن حکام افراد کو مشورہ دیتے ہیں کہ وہ کم از کم پانچ میٹر (١٦.٥  فٹ) دور رہیں کیونکہ تابکاری شعائیں بیماری یا جلنے کا باعث بن سکتی ہیں ۔

ریاست کے ایمرجنسی سروسز ڈپارٹمنٹ نے خطرات سے نمٹنے کی ایک ٹیم بنائی ہے اور خصوصی ٹولز لائے ہیں، جیسے کہ پورٹ ایبل ریڈی ایشن سروے میٹر جو چلتی گاڑیوں سے لے کر ٢٠ میٹر کے دائرے میں تابکاری کی سطح کا اندازہ لگانے کے لیے استعمال کیے جا سکتے ہیں۔

ٹراٹ نے دعویٰ کیا کہ ریو نے گیج کو محفوظ طریقے سے پیک کرنے اور نقل و حمل کے لیے ضروری تربیت اور اسناد کے ساتھ تیسرے فریق کے ٹھیکیدار کی خدمات حاصل کی ہیں۔

انہوں نے کہا، “ہم نے سائٹ پر موجود تمام علاقوں کا ریڈیولاجیکل سروے مکمل کر لیا ہے جہاں یہ آلہ موجود تھا، ساتھ ہی کان کی جگہ کے اندر موجود سڑکوں کے ساتھ ساتھ گودائی دری کان کی جگہ سے دور جانے والی سڑکوں کا سروے کیا لیا گیا ہے،” انہوں نے مزید کہا کہ ریو یہ بھی تحقیقات کر رہے ہیں کہ نقصان کیسے ہوا.

تجزیہ کاروں نے کہا کہ کان کی جگہوں پر خطرناک سامان کی نقل و حمل معمول کی بات ہے اور ایسے واقعات انتہائی نایاب ہیں اور یہ ریو کے خراب حفاظتی معیارات کی عکاسی نہیں کرتے ہیں۔

٢٠٢٠ میں لوہے کی کان کے لیے مغربی آسٹریلیا کے پلبرا کے علاقے میں دو قدیم اور مقدس راک شیلٹرز کو تباہ کرنے کے بعد اس واقعے نے کان کنی گروپ کے سر درد میں اضافہ کر دیا۔

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں