Tuesday, May 28, 2024

کھیتران بلوچ سیاستدان نے اپنی ذاتی جیل میں ماں اور اس کے دو بیٹوں کو قتل کر دیا۔

- Advertisement -

بلوچ سیاستدان سردار عبدالرحمن کھیتران نے اپنے کارکن کی ماں اور ااسکے دو بیٹوں کو اپنی نجی جیل میں قتل کر دیا۔

اطلاعات کے مطابق بلوچستان کے ضلع بارکھان کے علاقے حاجی کوٹ میں ایک کنویں سے قتل شدہ تین لاشیں ملی ہیں جس پر مقامی لوگوں نے تصدیق کی ہے کہ یہ لاشیں کارکن خان محمد کی اہلیہ خان محمد مری اور اس کے دو بیٹوں کی ہیں۔

متاثرین کو بارکھان سے رکن صوبائی اسمبلی سردار عبدالرحمن کھیتران نے نجی جیل میں یرغمال بنایا تھا۔

خان محمد کی اہلیہ نے چند روز قبل ایک ویڈیو پیغام جاری کیا تھا اور ایم پی اے کھیتران کی نجی جیل سے اپنے اہل خانہ کی رہائی کی درخواست کی تھی۔

مقامی ذرائع سے اپنی پچھلی درخواست میں، اس نے یہ بھی کہا کہ سردار عبدالرحمن کھیتران نے اسے اور اس کی بیٹی کو معمول کے مطابق جنسی زیادتی کا نشانہ بنایا۔

دریں اثناء ان کے شوہر خان محمد نے بھی پریس انٹرویوز میں دعویٰ کیا کہ ان کی بیٹی پر حملہ کیا گیا اور زیر حراست خاندان کے دیگر افراد کو تشدد کا نشانہ بنایا گیا۔

انگلش میں خبریں پڑھنے کے لئے یہاں کلک کریں

خان محمد نے لاشوں کی شناخت کی تصدیق کرتے ہوئے کہا ہے کہ ان کے دیگر بچے اور رشتہ دار ابھی تک سردار کھیتران کے پاس ہیں۔ انہوں نے ان کی فوری رہائی کا مطالبہ کیا۔

یاد رہے کہ سردار کھیتران بی اے پی (بلوچستان عوامی پارٹی) کے رکن ہیں اور بلوچستان کے وزیراعلیٰ قدوس بزنجو کے مضبوط اتحادی ہیں۔

ذرائع نے یہ بھی بتایا کہ بارکھان منتقل ہونے کے بعد سے خان محمد نے ایک سال سے زائد عرصے تک عبدالرحمن کھیتران کے محافظ کے طور پر کام کیا۔

اسے گرفتار بھی کر کے جیل بھیج دیا گیا لیکن رہائی کے بعد اس کے سردار کھیتران کے ساتھ کچھ اختلافات پیدا ہو گئے جس کی وجہ سے وہ بارکھان سے فرار ہو گئے لیکن ان کے خاندان کو گرفتار کر کے یرغمال بنا لیا گیا۔

جے آئی ٹی تشکیل دے دی گئی

آج صبح جاری ہونے والی ایک پریس ریلیز میں کہا گیا ہے کہ قتل کی تحقیقات کے لیے لورالائی رینج کے ڈی آئی جی کی سربراہی میں جوائنٹ انویسٹی گیشن ٹیم تشکیل دے دی گئی ہے۔ جے آئی ٹی میں ایس ایس پی انویسٹی گیشن، اسپیشل برانچ بارکھان کے نمائندے اور بارکھان ڈی سی کو بھی شامل کیا گیا ہے، جنہوں نے نے تحقیقات کا آغاز کیا ہے۔ نوٹیفکیشن کے مطابق کہ حکومت کو رپورٹ پیش کرنے کے لیے 30 دن کا وقت دیا گیا ہے۔

قتل پر بلوچستان کے اراکین پار اسمبلی کا ردعمل

اس لرزہ خیز قتل کی خبر پھیلتے ہی کوئٹہ میں بلوچستان اسمبلی کے متعدد اراکین نے واقعے کی مذمت کی۔ بلوچستان نیشنل پارٹی (بی این پی) کے ایم این اے ملک نصیر احمد شاہوانی نے قتل کی مذمت کرتے ہوئے مطالبہ کیا ہے کہ اس کی تحقیقات کرائی جائیں۔ ’’جس معاشرے میں انصاف نہ ہو وہ فنا ہو جائے گا‘‘۔

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں