Monday, April 22, 2024

فتح قسطنطنیہ

- Advertisement -

مشرقی رومی سلطنت کے دارالحکومت کوعربوں کی طرف سے قسطنطنیہ کہا گیا۔

قسطنطنیہ مسلمانوں کے لیے ایک آئیڈیل بن گیا۔

سلطنت فارس جس نے ایران اور عراق پر حکومت کی اور مشرقی رومن بازنطینی سلطنت جس نے ایشیا مائنر، شام، مصر اور بلقان پر حکومت کی، اسلام کے عروج کے دوران، دنیا میں یہی دو طاقتور ریاستیں تھیں۔

انگلش میں خبریں پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

قسطنطنیہ پر ابتدائی اسلامی حملے

مسلمانوں اور بازنطینیوں کے درمیان جنگ، جو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی حیات طیبہ میں شروع ہوئی، چاروں خلفاء کے دور میں جاری رہی، مسلمانوں نے قسطنطنیہ کے خلاف زمینی اور بحری مہمات شروع کیں۔

چھے سو بیالیس میں ساسانی سلطنت کے زوال کے بعد بازنطینی سلطنت مسلمانوں کا واحد فوجی ہدف بن گئی اور اسے تباہی کے خطرے کا سامنا کرنا پڑا۔

اسلام کے دوسرے خلیفہ عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ کے دور میں سلطنت فارس مسلمانوں کے ہاتھوں تباہ ہو چکی تھی۔ سلطنت کی زمینیں بھی لے لی گئیں۔ پہلے دو بازنطینی علاقے جن پر مسلمانوں نے قبضہ کیا وہ شام اور مصر تھے۔

رسول الله صلی اللہ علیہ وسلم کے ارشادات 

حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی مشہور احادیث نبوی روایت اس مثال کی علامت ہیں، بے شک آپ قسطنطنیہ کو فتح کریں گے۔ وہ کیسا شاندار لیڈر ہو گا اور وہ فوج کیسی شاندار فوج ہو گی اور قسطنطنیہ پر چڑھائی کرنے والی پہلی فوج کے گناہ  معاف کر دئے جائیں گے۔

پیغمبر اسلام حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے صحابہ کو سکھایا کہ فتح جنگ کے ذریعے اور ایمان کے پیغام کی تبلیغ کے ذریعے ہوسکتی ہے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے یہ بھی اشارہ کیا کہ بازنطینی اور ساسانی سلطنتیں اسلام کی راہ میں دو سب سے بڑی رکاوٹیں تھیں، اور اس طرح امت کو یہ کہتے ہوئے ااشارہ دیا اگر خسرو تباہ ہو گیا تو کوئی خسرو پیروی نہیں کرے گا، اگر قیصر برباد ہو گیا تو کوئی قیصر نہیں چلے گا۔ ان کے خزانے اللہ کی راہ میں تقسیم ہوں گے۔ اس حدیث میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا قول کا مطلب یہ ہوا کہ یہ دونوں سلطنتیں مسلمانوں کے تابع ہو جائیں گی۔ اس طرح اس بات پر زور دیا کہ ایک طویل جدوجہد ہوگی۔ شہر کے لیے، جس کے لیے بہت صبر اور استقامت کی ضرورت ہوگی۔

چھے سو ایکسٹھ میں جب اموی اقتدار میں آئے تو مسلمانوں اور بازنطینی سلطنت کے درمیان لڑائی وہیں سے جاری رہی جہاں سے اس نے چھوڑا تھا۔ قسطنطنیہ کا پہلا محاصرہ مدینہ کے صحابی فضلہ بن عبید کی قیادت میں ہوا۔

بنو امیہ کے دور کے حملے 

مسلمانوں نے حضرت امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کے زمانے سے قسطنطنیہ کو فتح کرنے کی بھرپور کوشش کی۔شہر کو فتح کرنے والی پہلی مسلم فوج 670 میں بھیجی گئی۔رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے بعض اصحاب جو اس وقت زندہ تھے انہوں نے بھی لشکر میں حصہ لیا۔ان میں سے ایک ابو ایوب الانصاری تھے جنہیں آج ترکوں میں ایوب سلطان کے نام سے جانا جاتا ہے اور استنبول کے ایک مشہور ضلع میں ان کا مقبرہ ان کے نام سے منسوب ہے۔ 80 سال سے زیادہ عمر کے ابو ایوب الانصاری نے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی خوشخبری حاصل کرنے کے لیے محاصرے میں حصہ لیا۔

اس کے بعد اموی خلیفہ عبد الملک نے اپنے بیٹوں سلیمان اور مسلمہ کو 715 میں ایک بار پھر شہر کا محاصرہ کرنے کے لیے بھیجا۔ مسلمہ نے زمین پر اناطولیہ کے اوپر شہر کو گھیر لیا جبکہ انکے بھائی سلیمان بحیرہ ایجین کے اوپرتک پہنچ گئے مگر شہر مکمل طور پر فتح نہیں کر پائے تھے۔تاہم مسلمہ نے استنبول کے ایک بڑے علاقہ گالاٹا پر قبضہ کر لیا اور سات سال تک اس جگہ پر رہے۔

گالاٹا میں عرب مسجد کا ہونا ان دنوں کی یاد ہے۔صدیوں بعد بھی عثمانی ترکوں نے اس آئیڈیل کو زندہ کیا۔ چوتھے عثمانی سلطان یلدرم بایزید اور ان کے پوتے سلطان مراد دوم نے کئی بار شہر کا محاصرہ کیا۔تاہم دشمن کے دوسرے حملوں کی وجہ سے ہر کوشش میں محاصرہ کو ختم کر دیا گیا۔

اسٹریٹجک اہمیت

استنبول نہ صرف ایک اہم اسٹریٹجک مقام پر واقع ہے بلکہ یہ ایک شاندار مناظر بھی پیش کرتا ہےجیسا کہ فرانس کے شہنشاہ نپولین نے کہا تھا کہ اگر زمین ایک ریاست ہوتی تو استنبول اس کا دارالحکومت ہوتا۔ آج بھی ویسا ہی ہے۔

قسطنطنیہ کی فتح  

ساتویں عثمانی سلطان محمد ثانی کو قسطنطنیہ پر فتح نصیب ہوئی۔ اکیس سالہ باصلاحیت بادشاہ نے دن رات محاصرے کا منصوبہ بنایا۔ انھوں نے باسپورس کے یورپی کنارے پر تیزی سے ایک قلعہ بنانے کا حکم دیا اور ایک تیز ٹھنڈک والی توپ بنائی، جو اس وقت کی سب سے بڑی توپ تھی۔ انھوں نے انٹیلی جنس کے زریعے شہر بھر کی معلومات اکٹھی کیں۔ اس وقت قسطنطنیہ میں رہنے والے آرتھوڈوکس پر کیتھولک دباؤ نے انہیں خوفزدہ کر دیا تھا۔ کچھ لوگ سلطنت عثمانیہ کو ایک نجات دہندہ کے طور پر دیکھتے تھے کیونکہ انھوں نے عیسائیوں کو ہر جگہ اپنے مذہب پر آزادی سے عمل کرنے کی اجازت دی تھی۔ وزیر گرینڈ ڈیوک لوکاس نوٹراس نے ایک بار کہا تھا کہ میں لاطینی مٹر کے بجائے قسطنطنیہ شہر کے بیچوں بیچ ترکی کی پگڑی دیکھوں گا۔

گولڈن ہارن کے منہ میں دفاعی زنجیر کی وجہ سے جب ان کا بحری بیڑا شہر تک پہنچنے سے قاصر تھا تو سلطان محمد دوم نے بہت سے جہازوں کو سمندر میں گرنے اور شہر کے مرکز پر حملہ کرنے کا حکم دیا۔ کئی دنوں تک شہر کی دیواروں پر توپیں چلتی رہیں۔ بازنطینی سلطنت کے سپاہیوں نے بالآخر 53 دن کے محاصرے کے بعد ہار مان لی۔

بازنطینی شہنشاہ

شہر کی دیواروں پر آخری بازنطینی شہنشاہ قسطنطین 11 پلیولوگوس کی لاش ملی تھی، جو ایک ہاتھ میں تلوار لیے جنگ میں مر گیا تھا۔ سلطان محمد ثانی نے بادشاہ کے احترام میں بہادر دشمن کو دفن کرنے کی اجازت دے  دی۔ 29 مئی 1453 کو ترکوں کی طرف سے قسطنطنیہ کی فتح محض ایک شہر کے زوال سے زیادہ ہے۔ یہ فتح ترکی اور اسلامی تاریخ کے ساتھ ساتھ عالمی تاریخ کا ایک اہم موڑ تھا۔

فتح کے بعد 

قسطنطنیہ کی فتح نے مسلمانوں کے لیے راہ ہموار کی۔ عثمانی اب ایک محفوظ پوزیشن میں تھے۔ مسلمان فوجیں ویانا تک پہنچ گئیں۔ اسلام یورپ میں متعارف ہوا اور بہت سے بلقان کمیونٹیز مسلمان ہو گئیں۔

سلطان محمد ثانی، جو حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کا نام رکھتے ہیں،انھوں نے پوری اسلامی دنیا میں ایک غیر معمولی پہچان حاصل کی کیونکہ وہ استنبول کو فتح کرنے میں کامیاب ہوئے، جہاں ایک نوجوان شہنشاہ کے طور پر ان سے پہلے بہت سے لوگوں نے کوشش کی تھی۔ آج بھی مسلمانوں میں کوئی ایسا نہیں جو انہیں نہ جانتا ہو اور نہ ہی انہیں یاد کرتا ہو۔

خلافت کی داغ بیل 

اس فتح نے سلطان محمد ثانی کے پوتے سلیم اول کے خلیفہ کے طور پر ان کے بعد آنے والوں کی راہ ہموار کی۔ پوری مسلم دنیا نے عثمانی سلاطین کی قیادت کو قبول کر لیا جنہوں نے قسطنطنیہ کو فتح کر کے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی بشارت حاصل کی۔ جیسا کہ پیغمبر محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے الفاظ میں شہر کا نام قسطنطنیہ کا ذکر کیا، عثمانیوں نے یہ نام برقرار رکھا۔

انہوں نے فخر کے ساتھ اسے دنیا کے سب سے شاندار اور اہم شہر کی فتح کا مظاہرہ کرنے کے لیے دکھایا جسے قسطنطین اول جیسے طاقتور شہنشاہ نے قائم کیا تھا۔ اس نام کے ساتھ سکے اور اشاعتیں تیار کی گئی ہیں۔

عالمی تاریخ کا ایک اہم لمحہ

عالمی تاریخ کا ایک اور اہم لمحہ قسطنطنیہ پر حملہ ہے۔ فرقہ وارانہ تقسیم سے قطع نظر، لاطینی اطالوی، ہسپانوی، کاتالان، اور فرانسیسی عیسائی تاریخ کے اہم شہر کی حفاظت کے لیے آئے کیونکہ انہوں نے محاصرے کو اپنے وقار کے معاملے کے طور پر دیکھا۔ انہوں نے بہادری سے شہر کا دفاع کیا، پھر بھی انہیں شکست ہوئی۔

محمد فاتح نے ان شیولیئرز کے ساتھ نائٹل انداز میں برتاؤ کیا۔ ان کی بہادری کے بدلے، اس نے انہیں قید نہیں کیا اور انہیں اپنے گھر واپس جانے کی اجازت دی۔ ایک عقیدہ اس بات کی تائید کرتا ہے کہ یورپ میں ترکوں کے خطرے کو ختم نہیں کیا جا سکتا۔ اس کے بعد یورپیوں نے مغرب میں دوسری جگہوں کی تلاش شروع کر دی، جس سے نئی دریافتوں کی راہ ہموار ہوئی۔ نئی دنیا کا خزانہ یورپ میں بہہ گیا۔ اس سے نشاۃ ثانیہ کا ظہور بھی ہوا۔

اناطولیہ اور بلقان میں ترک جڑوں کو قسطنطنیہ کی فتح کے مقصد سے آسان بنایا گیا تھا۔ ان کی یقین دہانی نے مزید فتوحات کی راہ ہموار کی۔ مصر اور ہنگری کو فتح کرنے کی کلید استنبول تھی۔

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں