Wednesday, April 24, 2024

قومی سطح پر نو مئی یوم سیاہ کے طور پر منانے کا فیصلہ

- Advertisement -

قومی سلامتی کمیٹی این ایس سی نے منگل نو مئی کو ملک بھر میں یوم سیاہ کے طور پر منانے پر اتفاق کیا۔

جب نو مئی کو پی ٹی آئی رہنما عمران خان کی گرفتاری کے بعد ہونے والے مظاہروں کے دوران تشدد اور تباہی کی متعدد کارروائیاں رپورٹ ہوئیں۔

کراچی میں پولیس کے ساتھ ہجوم کی لڑائی، راولپنڈی میں فوج کے جنرل ہیڈ کوارٹر میں دھاوا بولنا اور توڑ پھوڑ، اور لاہور کور کمانڈر کے گھر میں توڑ پھوڑ کی ویڈیوز سوشل میڈیا پر احتجاج کے دوران شیئر کی گئیں۔

انگلش میں خبریں پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

اس دوران سرکاری نشریاتی ادارے ریڈیو پاکستان کے پشاور ہیڈ کوارٹر میں آگ لگ دی گئی۔

این ایس سی کا آج کا فیصلہ ملک کی سول اور فوجی قیادت کی جانب سے 9 مئی کے واقعات کی مذمت کرنے والے بیانات کی ایک طویل قطار میں سب سے تازہ ترین ہے۔

رابطہ کاری کا بڑا پلیٹ فارم

باڈی کا اجلاس جو کہ سیکیورٹی معاملات پر رابطہ کاری کا سب سے بڑا پلیٹ فارم ہے، وزیراعظم شہباز شریف نے اسلام آباد میں وزیراعظم ہاؤس میں بلایا تھا۔ وفاقی وزراء جنرل عاصم منیر، چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی جنرل ساحر شمشاد مرزا اور دیگر اہم حکام موجود تھے۔

اجلاس کے دوران وزیر اعظم کے دفتر سے جاری ہونے والے ایک بیان کے مطابق، اجلاس کے دوران اس بات پر زور دیا گیا کہ تشدد اور امن کو خراب کرنے والی دیگر کارروائیوں کے خلاف زیرو ٹالرنس کی پالیسی اختیار کی جائے گی۔

اجلاس کے شرکاء نے کہا، ذاتی اور سیاسی مفادات کے لیے ہنگامہ آرائی اور فوجی تنصیبات پر حملوں کی شدید مذمت کی جاتی ہے اور مسلح افواج کے ساتھ یکجہتی کا اظہار کیا جتا ہے۔

پی ایم او کے بیان میں کہا گیا، شرکاء نے فوجی تنصیبات اور عوامی املاک کے تقدس اور عزت کی خلاف ورزی کو برداشت نہ کرنے اور 9 مئی کے یوم سیاہ میں ملوث تمام عناصر کو انصاف کے کٹہرے میں لانے کے عزم کا اعادہ کیا۔

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں