Thursday, May 30, 2024

ای سی سی 3 بین الاقوامی ہوائی اڈوں کو غیر ملکی تحویل میں دینے کا فیصلہ کرے گی۔

- Advertisement -

اقتصادی رابطہ کمیٹی جمعرات کو 3 بین الاقوامی ہوائی اڈوں (اسلام آباد، کراچی اور لاہور) کے آپریشن کو غیر ملکی تحویل میں دینے کا فیصلہ کرے گی۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ ای سی سی جمعرات کو اسلام آباد، کراچی اور لاہور کے بین الاقوامی ہوائی اڈوں کے آپریشن کو آؤٹ سورس کرنے سمیت نو نکاتی ایجنڈے پر غور کرے گی۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ وفاقی حکومت پاکستان میں بڑے ہوائی اڈوں کے آپریشن کو آؤٹ سورس کرنے کے لیے مختلف آپشنز پر غور کر رہی ہے جس کا مقصد مسافروں کی خدمات میں بہتری لانا اور ان کی آمدنی کے امکانات کو بہتر بنانا ہے۔

اس سلسلے میں وفاقی کابینہ نے مختلف فیصلوں سے آگاہ کیا اور ان سب کی تعمیل میں ایکسپریشن آف انٹرسٹ کو بھی مدعو کیا گیا کہ وہ ہوائی اڈوں کی کارپوریٹائزیشن کے لیے تجاویز تیار کرنے کے لیے ایک آڈٹ فرم کی خدمات حاصل کرے۔

انگلش میں خبریں پڑھنے کے لئے یہاں کلک کریں

وفاقی کابینہ نے اس سارے عمل کی نگرانی کے لیے وزراء پر مشتمل کمیٹی بھی تشکیل دی تاہم یہ عمل حتمی شکل اختیار نہ کر سکا۔

تیس دسمبر 2022 کو ہونے والی میٹنگ کے دوران، وزیر اعظم نے تین ہوائی اڈوں کے آپریشن کی آؤٹ سورسنگ کی ہدایت کی۔ کراچی، لاہور اور اسلام آباد کو پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ اتھارٹی ایکٹ 2017 کے تحت ایک سرکردہ بین الاقوامی مالیاتی ادارے (آئی ایف آئی) کو شامل کرکے تیزی سے مکمل کیا جائے گا۔

اسی ایکٹ کا سیکشن 31 پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ اتھارٹی کے ضابطہ 5(2) کے ساتھ (آئی ایف آئی کا براہ راست معاہدہ بطور ٹرانزیکشن ایڈوائزرز) ریگولیشنز 2023، کسی آئی ایف آئی کو بطور ٹرانزیکشن ایڈوائزر رکھنے کی اجازت دیتا ہے بشرطیکہ اس کی منظوری ہو۔ پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ اتھارٹی بورڈ۔

پاکستان سول ایوی ایشن اتھارٹی (پی سی اے اے) نے پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ اتھارٹی بورڈ سے درخواست کی کہ وہ مذکورہ ہوائی اڈوں کے آپریشن کو آؤٹ سورس کرنے کے لیے آئی ایف آئی کو بطور ٹرانزیکشن ایڈوائزر شامل کرنے کی اجازت دے، جس پر بورڈ نے 11 جنوری 2023 کو غور کیا اور اس کی منظوری دی۔

منظوری کے بعد، پی سی اے اے نے مندرجہ بالا ضوابط کے مطابق لین دین کے مشیر کے طور پر براہ راست مشغولیت کے لیے تمام اہل آئی ایف آئییس سے رابطہ کیا۔ تاہم، صرف آئی ایف سی، جو کہ ورلڈ بینک گروپ کا ایک حصہ ہے، نے اپنی دلچسپی کا اظہار کیا۔

ان سے درخواست کی گئی کہ وہ اپنے تجربے اور قابلیت کی تفصیلات فراہم کریں جن کا جائزہ پھر پی سی اے اے بورڈ کے منظور کردہ انتخابی معیار کے مطابق کیا گیا۔ وہ ٹرانزیکشن ایڈوائزر کے طور پر کام کرنے کے اہل پائے گئے۔ مذکورہ بالا ضوابط کے ضوابط 6 اور 7 کے مطابق، پی سی اے اے بورڈ نے پی سی اے اے کو اجازت دی کہ وہ اپنی مصروفیت کی شرائط کو حتمی شکل دینے کے لیے آئی ایف سی کے ساتھ گفت و شنید کرے۔

طویل اور تفصیلی گفت و شنید کے بعد اور وزارت خزانہ، فیڈرل بورڈ آف ریونیو اور وزارت خارجہ کی آراء کو مدنظر رکھتے ہوئے، آئی ایف سی کے ساتھ ٹرانزیکشن ایڈوائزری ایگریمنٹ (ٹی اے ایس اے) کے مسودے کو حتمی شکل دی گئی۔ اس کے بعد یہ معاہدہ 2 مارچ 2023 کو ہونے والی میٹنگ کے دوران پی سی اے اے بورڈ کو پیش کیا گیا۔

پی سی اے اے بورڈ نے ٹی اے ایس اے کے پیش کردہ مسودے کی منظوری دی جو وزارت قانون و انصاف کی قانونی جانچ سے مشروط ہے۔ اسی وقت پی سی اے اے بورڈ نے مشاہدہ کیا کہ چونکہ ٹی اے ایس اے کامیابی کے فیس ماڈل پر مبنی ہے جس میں کلائنٹ کی جانب سے لین دین کو آگے بڑھانے میں ناکامی پر جرمانے عائد ہوتے ہیں، اس لیے تین کے آپریشن کی آؤٹ سورسنگ کے لیے مضبوط سیاسی عزم کی ضرورت ہے۔ ہماری طرف سے ہوائی اڈوں کو نشانہ بنائیں۔

اس خلاصے کے پہلے پیراگراف میں مختصراً ذکر کیے گئے ماضی کے تجربے کے پیش نظر، اس طرح کے عزم کا واضح مظاہرہ نہ صرف اس عمل کی تکمیل کے لیے بلکہ اس سے بھی اہم بات یہ ہے کہ اچھے مقابلے کو فروغ دینے اور اس طرح حقیقی مالیاتی فوائد حاصل کرنے کے لیے بھی اہم ہوگا۔

ہوائی اڈوں کی آؤٹ سورسنگ سے۔ ساتھ ہی، یہ ٹی اے ایس اے کی شرائط و ضوابط پر عمل کرنے اور ان کی فیس وغیرہ کی ڈالر کی شرائط میں ادائیگی کے حوالے سے آئی ایف سی کا اعتماد بڑھانے میں بھی مدد کرے گا۔

ان وجوہات کی بناء پر، پی سی اے اے بورڈ نے ہدایت کی کہ ٹی اے ایس اے کا مسودہ کابینہ کی اقتصادی رابطہ کمیٹی کے سامنے ان کی معلومات اور منظوری کے لیے رکھا جائے۔

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں