Thursday, May 30, 2024

وفاقی حکومت نے نیپرا سے بجلی کی قیمت میں اضافے کی درخواست کر دی۔

- Advertisement -

اسلام آباد: وفاقی حکومت کی جانب سے نیپرا کو اضافے کی درخواست کے بعد کے الیکٹرک کے صارفین کے لیے بجلی کی قیمت میں 6 روپے فی یونٹ اضافے کا امکان ہے۔

پاور ریگولیٹر دو سہ ماہی فیول کاسٹ ایڈجسٹمنٹ ایف سی اے کے لحاظ سے وفاقی حکومت کی طرف سے بجلی کی قیمت کی درخواست جمع کرانے کے بعد 3 اپریل کو سماعت کرے گا۔

بہر حال، توانائی کے نرخوں میں اضافہ ان پاکستانیوں کے لیے مشکلات میں اضافہ کرے گا جو کھانے کے لیے دسترخوان پر خرچ کر رہے ہیں، یہ یقینی طور پر ایک گہرا بحران ہے جس کی خصوصیات 220 ملین آبادی والے ملک کو متاثر کرتی ہے۔

انگلش میں پڑھنے کے لئے یہاں کلک کریں

یہ دیکھتے ہوئے کہ نقدی کی تنگی سے دوچار قوم ایک بحران سے دوسرے بحران میں پھنس رہی ہے، باشندے دراصل پہلے سے ہی دوہری مالیاتی اور حکومتی خرابی کے خلاف احتجاج کرتے رہے ہیں جس کی آزادی کے بعد کی تاریخ میں اس کی بہت کم مثال ملتی ہے۔

بڑھتی ہوئی قیمتیں 48 سال کی بڑی سطح پر ہیں۔ غیر ملکی زرمبادلہ کے ذخائر تیس دنوں سے کم درآمدات پر محیط ہیں۔ آخری سال کے نقصان دہ سیلابوں سے ہونے والے اربوں کے نقصان کا بل ڈنک مارتا رہے گا، جو زمین کے گرم ہونے والے معاشی اثرات کو نمایاں کرتا ہے۔

مزید برآں، شدید گرمی کی لہروں کی پیش گوئی نے صارفین کو بجلی کی توانائی کی دستیابی پر بھی توجہ مرکوز کر دی ہے کیونکہ پاکستان کو بھی گرمیوں کے مہینوں میں کمی کا سامنا کرنا پڑتا ہے جس کی وجہ سے دنیا بھر میں طویل لوڈ شیڈنگ ہوتی ہے۔

یہ بھی بتانا ضروری ہے کہ، نیپرا نے بجلی کے کاروبار (ڈسکوز) اور کے الیکٹرک کو آٹھ ماہ کے مہینوں میں صارفین سے 14.24 روپے فی یونٹ کے موخر فیول ایڈجسٹمنٹ سرچارج کی وصولی کی اجازت دی تھی۔

نیپرا کے فیصلے کے مطابق ڈسکوز ماہانہ 0 سے 200 یونٹ استعمال کرنے والے گھریلو صارفین سے 10.34 روپے فی پروڈکٹ، 0-200 ڈیوائسز استعمال کرنے والے غیر محفوظ صارفین سے 14.24 روپے فی پراڈکٹ، کھانے والوں سے 14.24 روپے فی پروڈکٹ وصول کریں گے۔ 201-300 زرعی آلات استعمال کرنے والے صارفین سے ہر ماہ 9.90 روپے فی پروڈکٹ جو کہ خصوصی ہوتے ہیں۔

پوری مقدار کو برقی توانائی کے صارفین کے ذریعے مارچ سے اکتوبر 2023 تک ماہ بہ ماہ قسطوں میں بحال کیا جائےگا۔

پاور آرگنائزیشنز مارچ سے اکتوبر 2023 تک آٹھ ماہ کے دوران صارفین کے ذریعے ایک حیران کن ایف سی اے مقدار کی وصولی کریں گی۔

اس کے علاوہ اتھارٹی نے کے الیکٹرک کو اجازت دی ہے کہ وہ اپنی پسند کے ساتھ صارفین سے 13.87 روپے فی ڈیوائس کے طور پر موخر گیس ایڈجسٹمنٹ سرچارج وصول کرے۔

کے الیکٹرک ہر ماہ 0-200 یونٹ صنوعات استعمال کرنے والے گھریلو محفوظ صارفین سے 9.97 روپے فی یونٹ، 0-200 یونٹ استعمال کرنے والے غیر محفوظ صارفین سے 13.87 روپے فی یونٹ، 201 -300 پروڈکٹس ہر ماہ استعمال کرنے والوں سے 13.87 روپے فی یونٹ وصول کرے گا۔، اور 9.90 روپے فی زرعی ڈیوائس استعمال کرنے والوں سے۔

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں