Thursday, May 30, 2024

مفتی عبدالشکور کے قتل پر ڈرائیور کے خلاف ایف آئی آر درج

- Advertisement -

جے یو آئی کے رہنما، قدرت اللہ، مفتی عبدالشکور قتل کیس کی مکمل تحقیقات کا مطالبہ کرتے ہیں اور اس واقعے کی انتہائی حساس نوعیت پر زور دیتے ہیں۔

اسلام آباد، وفاقی وزیر مذہبی امور مولانا مفتی عبدالشکور  کے گزشتہ روز اسلام آباد میں کار حادثے میں جاں بحق ہونے کے بعد اتوار کو ہائی لکس ریوو کے ڈرائیور  کے خلاف مقدمہ درج کر لیا گیا۔

تفصیلات 

اطلاعات کے مطابق شکور میریٹ سے سیکرٹریٹ چوک کی طرف جا رہا تھا کہ ہائی لکس ریوو نے پانچ افراد کو اپنی گاڑی سے ٹکر مار دی۔

ترجمان نے بتایا کہ مولانا عبدالشکور کو پولی کلینک اسپتال منتقل کیا گیا تھا لیکن افسوسناک طور پر وہ زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے دم توڑ گیا۔

انگلش میں خبریں پڑھنے کے لئے یہاں کلک کریں 

پولیس کے سینئر افسران جائے وقوعہ پر پہنچ پہنچ گئے تھے، جبکہ حادثے میں ملوث گاڑی اور اس میں سوار افراد کو پولیس نے تحویل میں لے لیا۔

جے یو آئی-ف کے میڈیا سیل کے مطابق، مرحوم وزیر کی نماز جنازہ اتوار کو دوپہر 2 بجے خیبر پختونخوا کے علاقے لکی مروت کے تاجبی خیل میں پڑھی جانی تھی۔

جے یو آئی کے حاجی قدرت اللہ نے غیر ارادی قتل، تیز رفتاری اور گاڑی کو نقصان پہنچانے کی اپنی شکایت کے حوالے سے سیکرٹریٹ تھانے میں فرسٹ انفارمیشن رپورٹ (ایف آئی آر) درج کرائی۔

ایف آئی آر کے مطابق وزیر مذہبی امور مولانا عبدالشکور افطار کے لیے میرے گھر تشریف لائے اور افطار کے بعد 8 بجکر 22 منٹ پر پارلیمنٹ لاجز نمبر سات کے لیے روانہ ہوئے۔

پولیس رپورٹ کے مطابق ایک ٹویوٹا ہلکس نے مولانا کی گاڑی کو راستے میں لاپرواہی، اور تیز رفتاری سے ٹکر مار دی جس میں مولانا عبدالشکور موقع پر ہی جاں بحق ہوگئے۔

واقعہ انتہائی حساس نوعیت کا ہے اور قدرت اللہ نے اس بات پر زور دیا ہے کہ اس کی مکمل تحقیقات ہونی چاہئیں۔ تصادم سے وزیر کی گاڑی مکمل طور پر تباہ ہوگئی۔

ایس ایچ او سیکرٹری ندیم طاہر کے مطابق پولیس نے رپورٹ درج کر کے تفتیش شروع کر دی ہے۔ انہوں نے وعدہ کیا کہ، معاملے کی مکمل چھان بین کی جائے گی۔

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں