Saturday, April 13, 2024

شہادت حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہہ

- Advertisement -

حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہہ کو قتل کرنے کا جرم بد ترین بے رحمانہ، سفاکانہ اور گھناؤنا جرم ہے، کیونکہ یہ اب کسی ایک آدمی کی مخالفت میں نہیں بلکہ پورے عقلی اسلامی انتظام کے خلاف ہے۔ یہ اب تک کے ہولناک جرائم میں شمار ہوتا ہے۔

حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہہ کو قتل کرکے، وہ درحقیقت مسلمانوں کی قوم کے ساتھ ساتھ اس پیغام، تاریخ اور ذیلی ثقافت کو بھی قتل کرنا چاہتے تھے جوحضرت علی بن ابی طالب کی زندگی میں سما چکے تھے۔

۔ تاریخ ولادت، 10رجب۔
۔ یوم ولادت، جمعہ۔
۔ مقام ولادت، اندرون کعبہ۔
۔ اسلام لانا، حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہہ بچوں میں سب سے پہلے مشرف بہ اسلام ہوئے۔
۔ شہادت، 21رمضان المبارک۔

آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہہ کی شہادت کا واقعہ

آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہہ نے 661 عیسوی تک حکومت کی، جب آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہہ 19 رمضان المبارک کو کوفہ کی عظیم مسجد، جدید عراق میں اپنی نماز پڑھ رہے تھے تو مصر کے ایک خارجی ابن ملجم نے زہریلی تلوار سے وار کیا، زخم مہلک ثابت ہوا۔ حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہہ تین دن تک زخموں کی تاب نہ لانے کے بعد اکیسویں رمضان المبارک کو 63 سال کی عمر میں شہیدہو گئے۔

تین دن کا دورانیہ

حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہہ نے اپنے فرزند امام حسن کو ان تین دنوں کے لیے قوم پر نظریاتی اور سماجی طور پر حکومت کرنے کی امامت سونپی۔ یہ تین دن حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہہ نے اللہ کو یاد کرنے، اس کی حمد کرنے میں گزارے۔

آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہہ ایسے مشورے اور نکات بھی پیش کرتے رہے جو حق کی طرف لے جائیں، صحیح کی طرف اشارہ کرتے ہیں، راہنمائی کا راستہ بتاتے ہیں، نجات کا راستہ بتاتے ہیں، اللہ کے احکام پر عمل کرنے کی دعوت دیتے ہیں، اور اپنے ناپسندیدہ خوابوں کی پیروی کے خلاف احتیاط کرتے ہیں۔

حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ  کی نصیحت اور رہنمائی

ایک نصیحت جو انہوں نے اپنے بیٹوں امام حسن علیہ السلام اور امام حسین علیہ السلام کے ساتھ ساتھ اپنے ہم وطنوں، قوم اور آنے والی نسلوں کو بھی دی وہ یہ ہے،

میں تمہیں نصیحت کرتا ہوں کہ اللہ سے ڈرو اور اس کی ذات پرشک نہ کرو، اس چیز پر برا نہ مانو جس سے تمہیں باز کیا گیا ہے۔ سچائی کا اعلان کرو اور اللہ کے لیے قدم اٹھاؤ۔ ظالم کے دشمن بنو اور مظلوم کے مددگار بنو۔

میں آپ کو، اپنے بچوں کو، اپنے اہل و عیال کو، اور جو بھی میرا پیغام سن سکتا ہے، ان سب کو نصیحت کرتا ہوں کہ اللہ کی فکر کریں، اپنے معاملات کو صحیح طریقے سےترتیب دیں، خاندان کے افراد آپس میں مل کر رہیں۔

قرآن پاک پر یقین رکھتے ہوئے اللہ سے ڈرو، اس بات کا خیال رکھو کہ اس کے اصولوں پر عمل کرنے میں کوئی تم پر سبقت نہیں لے سکتا۔

رب کعبہ کی طرف سے، میں کامیاب ہوں ،اللہ سے ڈرو نماز قائم کرو، کیونکہ یہ تمہارے ایمان کا ستون ہے۔

جہاد میں اللہ سے ڈرو، اللہ کی راہ میں اپنے مال، اپنی جان اور اپنی زبانوں سے لڑو۔

باہمی رابطہ رکھیں اور دینا اور لینا ضروری ہے۔ اپنے چہرے ایک دوسرے سے نہ پھیرو۔ اب نیکی کی تلقین اور برائی سے روکنا مت چھوڑنا،، ایسا نہ ہو کہ ناپاک لوگ آپ پر قابض ہوجائیں۔ ایسے میں اللہ آپ کی دعائیں قبول نہیں کرتا۔

حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہہ کی رحلت کے نتیجے میں قوم نے درج ذیل چیزیں کھو دیں

۔ وہ بہادری جو وقت کا قومی ترانہ بن چکی تھی۔
۔ ایک ایسی بہادر تاریخ جس کا کوئی تصور بھی نہیں کر سکتا تھا۔
۔ ایک پاکیزگی جس کا انبیاء نے اپنی بہترین صلاحیت کے ساتھ مظاہرہ کیا۔

انگلش میں پڑھنے کے لئے یہاں کلک کریں

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں