Wednesday, April 24, 2024

بھارتی بنگال نے متنازعہ فلم ’دی کیرالہ سٹوری‘ پر پابندی لگا دی

- Advertisement -

کولکتہ: متنازعہ فلم، دی کیرالہ سٹوری پر ریاست کی وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی نے ہندوستان کے مغربی بنگال میں پابندی عائد کر دی ہے، جنہوں نے فلم کو ’مسخ شدہ کہانی‘ قرار دیا ہے۔

بھارتی میڈیا رپورٹس کے مطابق فلم ’دی کیرالہ سٹوری‘ پر پابندی کے فیصلے کا اعلان پیر کو ریاستی سیکریٹریٹ میں کیا گیا۔ بنرجی نے ریاست کے چیف سیکریٹری کو ہدایت کی کہ فلم کو ریاست میں چلنے والی اسکرینوں سے ہٹایا جائے۔

مغربی بنگال کی حکومت نے ناقدین کے ان الزامات کے بعد فلم پر پابندی لگا دی ہے۔ کہ یہ فرقہ وارانہ منافرت کو ہوا دیتی ہے اور مسلم مخالف پروپیگنڈہ کرتی ہے۔

انگلش میں پڑھنے کے لئے یہاں کلک کریں

تاہم، دائیں بازو کے حکمران اتحاد نے اس فلم کا دفاع کیا ہے۔ جس میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ مخلوط عقیدہ رکھنے والی ریاست کیرالہ سے 32,000 ہندو اور عیسائی خواتین نے اسلام قبول کیا ہے۔ اور کچھ کو عسکریت پسند اسلامک اسٹیٹ گروپ نے بھرتی کیا تھا۔

تفصیلات:

اس فلم کی وزیر اعظم نریندر مودی نے توثیق کی ہے۔ اور ہندو سخت گیر لوگوں نے اس پر قبضہ کیا ہے۔ جو کہتے ہیں کہ اس کی تصویر کشی درست ہے۔ لیکن، ناقدین نے فلم کو جھوٹ بولنے کے لیے کہا ہے جس کا مقصد فرقہ وارانہ پولرائزیشن اور بدامنی کو ہوا دینا ہے۔ اختتامی کریڈٹ اب بھی کہتے ہیں کہ یہ “کیرالہ اور منگلور کی ان ہزاروں لڑکیوں کے لیے وقف ہے جو اپنی تبدیلی کے بعد گھر واپس نہیں آئیں”۔

رپورٹس بتاتی ہیں کہ فلم پر پابندی لگانے کے ممتا بنرجی کے فیصلے کو بی جے پی کے ریاستی صدر سکانتا مجمدار نے تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ جنہوں نے دعویٰ کیا کہ بنرجی “حقیقت سے آنکھیں بند کرنا چاہتی ہیں۔” انہوں نے یہ بھی الزام لگایا کہ فلم میں دکھایا گیا ہے کہ کس طرح اسلام پسند ہندو لڑکیوں کو لو جہاد میں پھنساتے ہیں اور بعد میں آئی ایس آئی ایس کے دہشت گرد بننے کے لیے بھیجتے ہیں۔

ممتا بنرجی نے کہا کہ فلم پر پابندی لگانے کا فیصلہ “بنگال میں امن کو برقرار رکھنے۔” اور نفرت انگیز جرائم اور تشدد کے کسی بھی واقعے سے بچنے کے لیے لیا گیا ہے۔ انہوں نے یہ بھی الزام لگایا کہ “بی جے پی کشمیر فائلوں کی طرز پر بنگال پر بننے والی فلم کو فنڈ دے رہی ہے۔”

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں