Wednesday, April 24, 2024

عمران خان کی گرفتاری کے بعد انٹرنیٹ پر پابندی عائد

- Advertisement -

نیٹ بلاکس، ایک تنظیم جو انٹرنیٹ کی آزادی اور رسائی کی نگرانی کرتی ہے، نیٹ بلاکس نے منگل کو پاکستان میں متعدد انٹرنیٹ فراہم کنندگان پر ٹویٹر، فیس بک اور یوٹیوب سمیت بڑے سوشل میڈیا پلیٹ فارمز کی رکاوٹ کی تصدیق کرنے والا ڈیٹا جاری کیا۔

ملک کے بعض علاقوں میں بندش کے ساتھ انٹرنیٹ مکمل طور پر بند کر دیا گیا۔ ۔یہ واقعات سابق وزیر اعظم عمران خان کو حراست میں لیتے وقت سامنے آئے، جس سے سنسر شپ اور آزادی اظہار پر پابندی کے خدشات بڑھ رہے تھے۔

نیٹ بلاکس کے ذریعے ریئل ٹائم نیٹ ورک ڈیٹا کا تجزیہ کیا گیا ہے کہ یہ رکاوٹیں لکھنے کے وقت ملک میں مخصوص موبائل اور فکسڈ لائن انٹرنیٹ فراہم کرنے والوں پر اثرانداز تھیں۔

انگلش میں خبریں پڑھنے کے لئے یہاں کلک کریں

تنظیم نے یہ اعداد و شمار ملک بھر کے 30 وینٹیج پوائنٹس سے لیے گئے 60 پیمائشوں کے ابتدائی نمونے سے جمع کیے ہیں۔ نتائج سے پتہ چلتا ہے کہ رکاوٹیں جان بوجھ کر پاکستان کی قومی انٹرنیٹ ریڑھ کی ہڈی پر لاگو کی گئی تھیں، جو حکام کی جانب سے مرکزی نقطہ نظر کی تجویز کرتی ہیں۔

اسلام آباد ہائی کورٹ میں پی ٹی آئی کے چیئرمین کی گرفتاری کے نتیجے میں ملک بھر میں احتجاجی مظاہرے ہوئے ہیں، اور ان کی جماعت نے پاکستان بھر میں دیگر مقامات پر مزید بدامنی کی کال دی ہے۔

خیبرپختونخوا اور لاہور میں متعدد حامیوں نے بڑی سڑکیں بند کر دیں، جہاں پولیس کو ہائی الرٹ پر رکھا گیا ہے۔ عینی شاہدین نے بتایا کہ مظاہرین نے بندرگاہی شہر کراچی میں ایک مصروف سڑک کو بھی روک دیا۔

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں