Thursday, June 13, 2024

جماعت اسلامی کے مقدمے کی سماعت 9 جون مقرر، پاناما پیپرز

- Advertisement -

سپریم کورٹ نے جماعت اسلامی (جے آئی) کے سات سالہ رہنما سراج الحق کی 2016 کی درخواست کی سماعت کے لیے 9 جون کی تاریخ مقرر کی، جس میں پاناما پیپرز لیک میں شناخت کیے گئے 436 پاکستانیوں کی تحقیقات کا مطالبہ کیا گیا تھا۔

واضح رہے کہ 2016 میں جماعت اسلامی کے سراج الحق اور اٹارنی طارق اسد نے پاناما پیپرز لیک میں شناخت ہونے والے 436 پاکستانیوں کے خلاف انکوائری کی درخواستیں جمع کرائی تھیں۔ جبکہ ایڈووکیٹ اسد انتقال کر گئے ہیں۔

دو رکنی بینچ جسٹس سردار طارق مسعود کی سربراہی میں درخواست کی سماعت کرے گا جس میں جسٹس امین الدین خان بھی شامل ہوں گے۔

اٹارنی جنرل آف پاکستان (اے جی پی) اور کیس کے دیگر فریقین کو بھی سپریم کورٹ سے نوٹس موصول ہو چکے ہیں۔

انگلش میں خبریں پڑھنے کے لئے یہاں کلک کریں

ساڑھے پانچ سال بعد سپریم کورٹ اس معاملے کی سماعت کر رہی ہے۔ 23 نومبر 2017 کو کیس کی آخری سماعت ہوئی تھی۔

تفصیلات

نام نہاد پانامہ پیپرز، جس میں خفیہ انفراسٹرکچر اور دولت مندوں اور طاقتوروں کے زیر استعمال آف شور ٹیکس پناہ گاہوں کے عالمی دائرہ کار کو ظاہر کیا گیا ہے، چھ براعظموں کے 300 سے زائد رپورٹرز کے بین الاقوامی اشتراک سے منظر عام پر لائے گئے۔

پاناما پیپرز کی تحقیقات کے مطابق، 50 سے زائد ممالک کے 140 سے زائد سیاستدان، جن میں 14 موجودہ یا ماضی کے عالمی رہنما شامل ہیں، آف شور کارپوریشنز سے منسلک تھے۔

کاغذات میں ان سینکڑوں پاکستانیوں کی شناخت بھی درج ہے جنہوں نے غیر ملکی ٹیکس پناہ گاہوں میں آف شور فرمیں رکھی ہیں، جن میں سابق وزیراعظم نواز شریف کے بچے بھی شامل ہیں۔

پاناما لیکس میں شامل 436 پاکستانیوں کے خلاف تحقیقات کی درخواستیں کچھ عرصے سے دھری کی دھری رہ گئیں لیکن ایک متعلقہ کیس میں مسلم لیگ (ن) کے قائد اور مقبول منتخب عہدیدار نواز شریف کو محض فرضی تنخواہ لینے سے انکار پر نااہل قرار دے دیا گیا۔

کیس کی خفیہ ایجنسیوں کے ارکان نے جے آئی ٹی بنانے میں مدد کی، اور سپریم کورٹ نے طریقہ کار کے ہر مرحلے کی قریب سے نگرانی کی۔

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں