Tuesday, May 28, 2024

پاکستان زیادہ پیداوار کے لیے آلو کی چوتھی نسل کے بیج تیار کرے گا

- Advertisement -

پاکستان میں آلو کی فصل ایک اہم نقد آور فصل ہے۔ مقامی کاشتکاروں کو وائرس سے پاک بیج کی فراہمی کو یقینی بنانے اور ملک میں فی ایکڑ پیداواری صلاحیت بڑھانے کے لیے، پاکستان ایگریکلچر ریسرچ کونسل تقریباً 150,000 ٹن اعلیٰ قسم کے چوتھی نسل کے بیج آلو تیار کرے گی۔

اسی مناسبت سے، پی اےآرسی بین الاقوامی زراعت پر کورین پروگرام کے تعاون سے 35 ایروپونک گرین ہاؤسز بھی قائم کرے گا تاکہ وائرس سے پاک آلو کے بیج پیدا کرنے کے لیے بڑے پیمانے پر کاشت کے لیے پہلی نسل کے بیج آلو کے ٹبر تیار کیے جا سکیں۔

پی اے آر سی کے ایک اہلکار کے مطابق جس نے پیر کو پاکستان کی سرکاری خبر رساں ایجنسی اے پی پی سے بات کی، اور بتایا کہ پاکستان اور کوریا فی الحال ایروپونک ٹیکنالوجی کا استعمال کرتے ہوئےآلوکے بیج کی پیداوار میں تعاون کر رہے ہیں، اور آلو کے بیج کی 30 فیصد سے زائد ضروریات کو نیشنل ایگریکلچر ریسرچ سینٹر (این اے آر سی) کی ٹشو کلچر لیبز سے پورا کیا جا سکتا ہے۔

انگلش میں خبریں پڑھنے کے لئے یہاں کلک کریں

انہوں نے مزید کہا کہ این اے آرسی میں دوسری فصل کٹائی کے لیے تیار کی گئی تھی اور یہ کہ پی اے آر سی اور کے او پی آئی اے ایک ساتھ مل کر آلو کے بیج کی پیداوار کے نظام کے لیے ایک پروجیکٹ پر کام کر رہے ہیں جس کا مقصد پیداواری صلاحیت میں اضافہ کرنا ، فصل کے بعد ہونے والے نقصانات کو کم کرنا، فارم کی سطح پر پروسیسنگ کو فروغ دینا، تعمیراتی کاموں میں اضافہ کرنا ہے۔ انسانی وسائل، اور روزگار کے اہم مواقع پیدا کرنا ہے۔

تفصیلات 

ان کا کہنا ہے کہ ملک کی اہم نقد آور فصلوں میں سے ایک آلو ہے، جو 2022 میں 313,000 ہیکٹر اراضی پر اگایا گیا تھا۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ پچھلے بڑھتے ہوئے سیزن کے دوران مقامی طور پر 7,937,000 ٹن آلو پیدا کیے گئے تھے۔

انہوں نے کہا کہ زیادہ تر ڈچ سے درآمد شدہ آلو کا بیج نہ صرف مہنگا ہے بلکہ کم از کم پانچ نسلوں پرانا ہے۔

پاکستان میں آلو کے بیج کی سالانہ درآمد تقریباً بارہ ہزار سے پندرہ ہزار  ٹن تھی جس کی قیمت تقریباً 3 ارب روپے ہے۔ اس ٹیکنالوجی کے ذریعے بیج کی مقامی پیداوار سے اس درآمدی لاگت کو کم کرنے میں مدد ملے گی۔

کمپنی کی توسیع کے امکان کی وجہ سے بیج کی پیداوار میں نجی شعبے کی شرکت کو “اہم” قرار دیتے ہوئےانہوں نے یہ بھی ذکر کیا کہ این اے آر سی کی ٹشو کلچر کی سہولیات 30 فیصد سے زیادہ مطلوبہ بیج فراہم کر سکتی ہیں۔

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں