Wednesday, April 24, 2024

پی آئی اے طوفان سے نمٹنے کے لیے تیار

- Advertisement -

پاکستان انٹرنیشنل ایئرلائنز( پی آئی اے ) کے ایک ترجمان نے منگل کو بتایا کہ آنے والے طوفان کے پیش نظر ہنگامی منصوبہ بنایا گیا ہے، اپنے ایمرجنسی رسپانس سینٹر اور ریمپ سیفٹی ٹاسک فورس کو فعال کیا گیا ہے۔

پی آئی اے کے ترجمان کا کہنا ہے کہ طوفان کے اثرات ایئرپورٹس اور ایئر سٹرپس پر آج بدھ کی صبح 3 بجے شروع ہونے کا امکان ہے، اس لیے صورتحال سے نمٹنے کے لیے آپریشنل تیاریاں مکمل کرلی گئی ہیں۔

انہوں نے ایک بیان میں کہا، طوفان اور اس کے نتیجے میں تیز ہوائیں اور جھونکے بدھ کو مقامی وقت کے مطابق تین بجے فضائی مقامات اور فضائی راستوں کو متاثر کرنا شروع کر دیں گے۔ پی آئی اے نے کسی بھی ناخوشگوار واقعے سے بچنے کے لیے اپنی آپریشنل تیاری مکمل کر لی ہے۔

انگلش میں خبریں پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

سندھ میں حکام، مسلح افواج کے ساتھ مل کر، ہائی الرٹ پر ہیں کیونکہ بِپرجوئے نامی شدید اشنکٹبندیی طوفان صوبے کے ساحلی علاقوں کے قریب پہنچ گیا ہے۔ توقع ہے کہ طوفان 15 جون جمعرات کو لینڈ فال کرے گا۔

پاکستان کے محکمہ موسمیات کے پی ایم ڈی نے کہا کہ بیپرجوئے اب منگل تک کراچی سے 410 کلومیٹر جنوب میں تھا اور 14 جون کی صبح تک اس کے مزید شمال کی طرف ٹریک کرنے کا امکان ہے پھر کیٹی بندر اور بھارتی گجرات کے ساحل کے درمیان دوبارہ گھماؤ اور کراس کرنا ہے۔

حفاظتی اقدام 

ترجمان نے کہا، کراچی اور سندھ کے ساحلی علاقوں سے ٹکرانے والے طوفان کے اثرات کے خلاف احتیاطی تدابیر کے طور پر، پی آئی اے کی انتظامیہ نے اثاثوں، آلات یا زندگی کو کسی بھی ممکنہ خطرے سے بچانے کے لیے چوبیس گھنٹے کی شفٹوں میں کام کرنے والی سیکیورٹی اور ریمپ سیفٹی ٹیموں کو فعال کر دیا ہے۔

پی آئی اے نے اپنا 24 گھنٹے ایمرجنسی رسپانس سنٹر بھی فعال کر دیا ہے جو موسم کی خرابی کی صورت میں فلائٹ آپریشنز کے لیے قریبی نگرانی اور فوری اقدامات کرے گا۔ کراچی اور سکھر ایئرپورٹس پر موسم کی خراب صورتحال کی صورت میں؛ ملتان اور لاہور کو متبادل فضائی میدان کے طور پر استعمال کیا جائے گا۔

ترجمان نے کہا کہ منگل کو کراچی سکھر کراچی پروازیں جو کہ اے ٹی آر کے ذریعے چلائی گئیں تیز ہواؤں کے باعث منسوخ کر دی گئی ہیں جبکہ بدھ کی پرواز کا فیصلہ موسم کی صورتحال کے مطابق کیا جائے گا۔

ترجمان نے طوفان کے دنوں میں سفر کرنے والے تمام مسافروں کو مشورہ دیا کہ وہ ہوائی اڈے پر پہنچنے سے پہلے پی آئی اے کے کال سینٹرز سے اپنی فلائٹ سٹیٹس چیک کریں۔ انہوں نے کہا کہ لمحہ بہ لمحہ صورتحال کا جائزہ لیا جا رہا ہے۔

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں