Wednesday, April 24, 2024

بجلی کا تحفظ، بازاروں کو رات 8 بجے بند کرنے کا فیصلہ

- Advertisement -

منگل کو وزیر برائے منصوبہ بندی، ترقی اور خصوصی اقدامات احسن اقبال کے بیان کے مطابق، توانائی کے تحفظ کی اسکیم کے حصے کے طور پرقومی اقتصادی کونسل (این ای سی) نے ملک بھر میں تمام بازاروں کو رات 8 بجے بند کرنے کے خیال کی منظوری دے دی ہے۔

اقبال نے رپورٹ کیا کہ آج کی این ای سی میٹنگ کے شرکاء میں ہر صوبے کے نمائندے شامل تھے۔ موجودہ صورتحال کا جائزہ لینے کے بعد متفقہ طور پر یکم جولائی سے تمام  بازاروں کو رات 8 بجے بند کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔ یہ سلسلہ یکم جولائی سے شروع ہو رہا ہے۔

ان کے مطابق، تمام صوبے اپنی مارکیٹیں رات 8 بجے بند کرنے کے فیصلے پر عمل درآمد کریں گے۔

انگلش میں خبریں پڑھنے کے لئے یہاں کلک کریں

وفاقی وزیر نے مزید کہا، بجلی کی توانائی وہ ہے جہاں حکومت سب سے زیادہ رقم خرچ کرتی ہے۔ ان اخراجات کو محدود کرنے کے لیےاقدامات کیے جا رہے ہیں، اور اگر ہم ان پر قابو پا لیں تو بہت سے مسائل حل ہو جائیں گے۔

حکومت اس معاملے کے حوالے سے مستقبل میں مزید اہم فیصلے کرے گی، انہوں نے کہا کہ گرمیوں کے دوران سب سے بڑا چیلنج بجلی کی پیداوار ہے۔ گھریلو صارفین کی طلب کو پورا کرنے کے لیے مارکیٹیں شام کو جلد بند کرنے پر اتفاق کیا گیا۔

صوبائی وزرائے اعلیٰ نے انتخاب کی منظوری دے دی۔ گرین انرجی کے اقدامات کی تنصیب کے ساتھ ساتھ فرسودہ بلب کو ایل ای ڈی لائٹنگ سے تبدیل کرنے کا بھی فیصلہ کیا گیا۔

تاجر برادری مارکیٹیں جلد بند کرنے کے خلاف ہیں۔

وفاقی حکومت کے فیصلے کو ڈیلرز  نے عبوری طور پر مسترد کر دیا ہے۔ حکومتی فیصلے کے ردعمل میں آل پاکستان ٹریڈرز ایسوسی ایشن نے مطالبہ کیا ہے کہ رات 8 بجے بازاروں کو بند کرنے کا فیصلہ واپس لیا جائے۔

آل پاکستان ٹریڈرز ایسوسی ایشن کے صدر جمیل بلوچ کی ایک پریس ریلیز کے مطابق، اس موسم گرما میں کوئی بھی اسٹور 8 بجے بند نہیں ہوگا۔ 8 بجے دکانیں بند کرنے کا غیر موثر طریقہ ہر حکومت نے اپنایا ہے۔ موسم گرما میں دن کے وقت کوئی لین دین نہیں کیا جاتا، خریداری رات11 بجے تک جاری رہتی ہے۔

جمیل بلوچ کے مطابق قوم میں سب سے مہنگی بجلی خریدنے والے تاجرہی ہیں۔ توانائی کو بچانے کے لیے معاشی پہیے کو روکنا مضحکہ خیز ہے۔ سرکاری اہلکاروں کو مفت بجلی لینا بند کر دینا چاہیے، اور وہ اپنے ایئر کنڈیشنر بھی بند کر دیں، تب ہر گھر کا پنکھا کام کرنے لگے گا۔ بدقسمتی سے یا تو وزیر دفاع یا وزیر منصوبہ بندی۔ انہوں نے مزید کہا کہ وزیر توانائی کو تاجروں کے نمائندوں سے بات کرنی چاہیے۔

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں