Tuesday, May 28, 2024

دہشت گردی کے الزام میں سویڈش ایرانی باشندےکو پھانسی

- Advertisement -

ایران نے میں ایک سویڈش ایرانی شخص کو پھانسی دے دی گئی جس پر الزام تھا کہ وہ 2018 میں ایک فوجی پریڈ پر ہونے والے مہلک حملے کے پیچھے تھا۔

ایرانی اور سویڈش نیشنلیٹی  رکھنے والے حبیب چاب ایک علیحدگی پسند گروپ کا بانی تھا جو ایران کے جنوب مغربی صوبہ خوزستان میں نسلی عربوں کی آزادی کا مطالبہ کرتا تھا۔

جب اسے 2020 میں ترکی میں ایرانی کارندوں نے اغوا کیا تو وہ دس سال سے سویڈن میں جلاوطنی کی زندگی گزار رہے تھے۔

انگلش میں خبریں پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

سویڈن کے وزیر خارجہ ٹوبیاس بلسٹروم نے دعویٰ کیا کہ ان کی حکومت نے ایران سے چاب کو پھانسی نہ دینے کی درخواست کی ہے۔

انہوں نے کہا کہ سزائے موت ایک غیر انسانی اور مستقل سزا ہے اور سویڈن، باقی یورپی یونین کے ساتھ، ہر طرح کے حالات میں اس کے استعمال کی مذمت کرتا ہے۔

دہشت گردانہ حملوں کا ذمہ دار

ایران کا دعویٰ ہے کہ چاب ملک کے جنوب مغرب میں دہشت گردانہ حملوں کا ذمہ دار ہے۔ ایران کی عدلیہ نے اس پر حرکت الندال کے رہنما ہونے کا الزام لگایا، جسے اہواز کی آزادی کے لیے عرب جدوجہد کی تحریک بھی کہا جاتا ہے۔

تیل کی دولت سے مالا مال صوبے میں ایک بڑی عرب اقلیت رہتی ہے اور وہ طویل عرصے سے پسماندگی اور امتیازی سلوک کی شکایت کرتی رہی ہے، جس کی تہران تردید کرتا ہے۔

2018 میں اہواز شہر میں ایک فوجی پریڈ کے دوران مسلح افراد نے پاسداران انقلاب کے ارکان پر فائرنگ کی تھی، جس میں فوجیوں اور تماشائیوں سمیت 25 افراد ہلاک ہوئے تھے۔

اطلاعات کے مطابق، چاب کو اغوا کرکے ایران اسمگل کرنے سے پہلے ایک خاتون سے ملنے کے لیے استنبول جانے پر آمادہ کیا گیا تھا۔ دعویٰ کیا جاتا ہے کہ اس کارروائی کی منصوبہ بندی ایک مشہور ایرانی مجرمانہ باس نے کی تھی ۔

ایرانی حکام نے اس بارے میں تفصیلات فراہم نہیں کیں کہ چاب کو کیسے گرفتار کیا گیا۔ ایک بار ایران کے اندر، سرکاری ٹی وی نے اسے 2018 کے حملے میں ملوث ہونے کا اعتراف کرتے ہوئے دکھایا۔

انہوں نے الزام لگایا کہ گروپ کے دیگر رہنما ڈنمارک، ہالینڈ اور سویڈن میں مقیم ہیں اور اس گروپ کو سعودی عرب سے مالی اور لاجسٹک سپورٹ حاصل ہے۔

قومی سلامتی سے متعلق الزامات پر حالیہ برسوں میں، ایران نے درجنوں ایسے ایرانیوں کو حراست میں لیا ہے جن کے پاس دوسری شہریت ہے یا بیرون ملک مستقل رہائش ہے۔

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں