Saturday, April 13, 2024

پاک ایران سرحد پر دہشت گردانہ حملوں کا خاتمہ، بیجنگ

- Advertisement -

اسلام آباد، زرائع کےمطابق، پہلی بار بیجنگ (چین) نے پاکستان اور ایران کے ساتھ مل کر دہشت گردی سے لاحق علاقائی خطرے سے نمٹنے کے لیے اقدامات کی نشاندہی کرنے پر اتفاق کیا ہے۔

جمعرات کو دفتر خارجہ کی جانب سے جاری کردہ معلومات کے مطابق پاکستان، بیجنگ اور ایران کے درمیان انسداد دہشت گردی اور سیکیورٹی کے حوالے سے پہلا سہ فریقی مشاورتی اجلاس بیجنگ میں بدھ کو  ڈائریکٹر جنرل کی سطح پر ہوا۔

وزارت خارجہ کے ڈائریکٹر جنرل عبدالحمید نے پاکستانی وفد کی قیادت کی۔

انگلش میں خبریں پڑھنے کے لئے یہاں کلک کریں

تفصیلات

وفد نے علاقائی سلامتی کی صورتحال خاص طور پر خطے کو پیش آنے والے دہشت گردی کے خطرے پر تفصیلی بات چیت کی۔ ہفتہ وار پریس بریفنگ کے دوران دفتر خارجہ نے اعلان کیا کہ سلامتی اور انسداد دہشت گردی سے متعلق سہ فریقی اجلاسوں کو ان بات چیت کے نتائج کی بنیاد پر ادارہ جاتی شکل دی گئی ہے۔

دفتر خارجہ کی ترجمان، ممتاز زہرہ بلوچ نے کہا، مقررہ وقت پر اضافی تفصیلات پر کام کیا جائے گا۔

یہ سہ فریقی تعاون چین کے لیے ایک طویل سفر طے کرے گا، جو خطے میں سی پی ای سی منصوبوں کے پیچھے محرک ہے، اس بات کو یقینی بنانے کے لیے کہ ان منصوبوں کو مکمل کرنے کے لیے سیکورٹی کے خطرات سے نمٹا جائے۔

سرحدی واقعات

مزید برآں، چین نے پاکستان اورایران سرحد پر جاری سرحدی واقعات کو کنٹرول کرنے کی ضرورت کا پتہ لگایا ہے، جہاں غیر ریاستی عناصر دونوں ممالک میں دہشت گردانہ حملے کرتے ہیں۔

پاکستان کے وزیر پٹرولیم مصدق ملک نے ایران پاکستان گیس پائپ لائن کے مستقبل کے بارے میں بات کرنے کے لیے امریکہ کا سفر کرتے ہوئے دفتر خارجہ کے ترجمان نے محفوظ رویہ اپنایا۔

جیسا کہ ہم پہلے ہی کہہ چکے ہیں، آئی پی پروجیکٹ پاکستان کے لیے اہم ہے، اور ہم اب بھی اس کے لیے پرعزم ہیں۔ اس کے نفاذ کے حوالے سے، کچھ مشکلات ہیں۔

انہوں نے مشورہ دیا،کہ اس فریم ورک کے اندر، ہم ایران اور امریکہ کے ساتھ تعاون جاری رکھے ہوئے ہیں۔ وزیر مملکت برائے پٹرولیم کی امریکہ میں ہونے والی ملاقاتوں کے بارے میں درست معلومات کے لیے متعلقہ وزارت سے رابطہ کیا جا سکتا ہے۔

پاکستان نے دعویٰ کیا کہ اس نے ایرانی نیول چیف ریئر ایڈمرل شہرام ایرانی کے ریمارکس کا مشاہدہ کیا ہے، جنہوں نے اوشین نیول الائنس بشمول بحرین، سعودی عرب، متحدہ عرب امارات، بھارت اور پاکستان کو بطور رکن تجویز کیا تھا۔

ترجمان نے کہا کہ جب پاکستان کی بات آتی ہے تو ہم کسی بھی آئیڈیا کا جائزہ لیں گے۔ ہم اس وقت کسی بیان پر تبصرہ کرنے کی پوزیشن میں نہیں ہیں۔

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں