Thursday, May 30, 2024

تھر کا کوئلہ پاکستان کی توانائی کی حفاظت کو یقینی بنا سکتا ہے

- Advertisement -

سندھ اینگرو کوئلہ مائننگ کمپنی کے چیف ایگزیکٹو آفیسر عامر اقبال نے کہا ہے کہ صرف تھر کا کوئلہ ہی بجلی کے نرخوں میں نمایاں کمی کرنے کے علاوہ پاکستان کی توانائی کی حفاظت کو یقینی بنا سکتا ہے۔

یہاں اے پی پی سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ تھر کے اندر موجود کوئلہ کے ذخائر کو کھولنے سے اگلے 250 سالوں تک تقریباً 100,000 میگاواٹ (میگاواٹ) بجلی پیدا کی جا سکتی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ کوئلے کو پاکستان میں گھریلو اور تجارتی صارفین دونوں کی مستقبل کی توانائی کی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے ایک سستا توانائی کا وسیلہ سمجھا جاتا تھا، گزشتہ پانچ سالوں میں کوئلے پر مبنی بجلی کی پیداوار میں بھی نمایاں اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔

سی ای او نے کہا کہ ایندھن کی درآمدی لاگت کو کم کرنے کے لیے ملک کو کوئلے کے مقامی وسائل کی طرف منتقل کرنے کی ضرورت ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ہندوستان میں بھی کوئلے سے چلنے والے پاور پلانٹس کل بجلی کا دو تہائی سے زیادہ پیدا کرتے ہیں۔

انگلش میں خبریں پڑھنے کے لئے یہاں کلک کریں

انہوں نے کہا کہ ہندوستان سالانہ 200 ملین ٹن کوئلہ درآمد کرتا ہے اور 500-600 ملین ٹن گھریلو کوئلہ استعمال کرتا ہے جبکہ پاکستان کی کوئلے کی پیداوار محض 14 سے 15 ملین ٹن سالانہ ہے۔

برآمد شدہ کوئلہ

عامر اقبال نے کہا کہ فی الحال سندھ اینگرو کوئلہ مائننگ کمپنی بلاک 2 سے 7.6 ملین ٹن سالانہ کوئلہ نکال رہا ہے اور اس کی صلاحیت کو 11.2 ملین ٹن تک بڑھایا جا رہا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ تھر کوئلہ کے کل 13 بلاکس تھے لیکن اس وقت دو بلاکس سے کوئلہ نکالا جا رہا ہے۔

کوئلے کو پاکستان کا مستقبل قرار دیتے ہوئے عامر اقبال نے کہا کہ تھر کے کوئلے کو نہ صرف بجلی کی پیداوار بلکہ سیمنٹ اور سٹیل کی صنعتوں میں بھی استعمال کیا جا سکتا ہے۔ تاہم، انہوں نے کہا کہ تھر کے کوئلے کو ابھی تک ریلوے نیٹ ورک کے ذریعے منسلک نہیں کیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ تھر کے کوئلے کو ریلوے نیٹ ورک سے جوڑنے کے بعد یہ نہ صرف پوری دنیا کے لیے کھلے گا بلکہ ملک کی معاشی خوشحالی کی راہ بھی ہموار کرے گا۔

پاور پلانٹس میں کوئلے کی اوسط کھپت تقریباً 0.62 کلوگرام فی گھنٹہ ہے۔ تاہم، نئے موثر پاور پلانٹس عام پلانٹس کے مقابلے میں 10 فیصد کم کوئلہ استعمال کرتے ہیں۔

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں