Thursday, May 30, 2024

حکومت کی جانب سے پٹرول اور ڈیزل کی قیمت میں 20 روپے کا اضافہ

- Advertisement -

نگراں حکومت نے پٹرول اور  ہائی اسپیڈ ڈیزل کی قیمت میں 18 اور 20 روپے اضافے کا اعلان کیا ہے جس سے عوام کو مشکلات کا سامنا ہوگا۔

جس سے ان میں پٹرول اور ڈیزل کی قیمت تقریباً اس ترتیب 290.45 روپے اور 293.40 روپےفی لیٹرہوگئی ہیں۔

یہ بیان منگل کی آدھی رات کو دیا گیا، شہباز شریف کے ماتحت پچھلی انتظامیہ کی جانب سے دونوں اشیاء کی قیمتوں میں 20 روپے کا اضافہ کرنے کے ایک پندرہ دن بعد۔

فائننس ڈویژن نے گزشتہ دو ہفتوں کے دوران عالمی مارکیٹ میں ایندھن کی قیمتوں میں اضافے کا حوالہ دیتے ہوئے نظرثانی شدہ قیمتوں کا اعلان کیا۔

انگلش میں خبریں پڑھنے کے لئے یہاں کلک کریں

اس کے نتیجے میں پاکستان میں صارفین کی قیمتوں میں بھی ردوبدل کیا جا رہا ہے۔

ایک روز قبل انوارالحق کاکڑ کے نگراں وزیراعظم بننے کے بعد پیٹرولیم اشیاء کی قیمتوں میں یہ پہلی ایڈجسٹمنٹ ہے۔

فائننس ڈویژن کے ایک بیان کے مطابق نئی قیمتوں کا اطلاق بدھ 16 اگست سے ہوگا۔

بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے ساتھ بیل آؤٹ پیکج کے معاہدے کے مطابق، پاکستان نے ایندھن پر 50 روپے فی لیٹر تک ٹیکس عائد کرنے پر رضامندی ظاہر کی ہے۔

قرض دہندہ کے ایگزیکٹو بورڈ نے حکام کے معاشی استحکام کے پروگرام کو سپورٹ کرنے کے لیے گزشتہ ماہ پاکستان کے لیے 3 بلین ڈالر، نو ماہ کے اسٹینڈ بائی معاہدے کی منظوری دی۔

آئی ایم ایف نے ایک بیان میں کہا کہ بورڈ نے خصوصی ڈرائنگ رائٹس (SDRs) میں 2.25 بلین ڈالر کی رقم کے لیے ملک کے لیے بیل آؤٹ پیکج کی منظوری دے دی ہے، جو کہ تنظیم اپنے رکن ممالک کے کھاتوں میں جمع کرتی ہے۔ آئی ایم ایف کے مطابق، یہ تقریباً 3 بلین ڈالر، یا پاکستان کے کوٹے کا 111 فیصد بنتا ہے۔

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں