Thursday, May 30, 2024

غیر معمولی گرمی کی لہر

- Advertisement -

پاکستان اس وقت غیر معمولی گرمی کی لہر کا سامنا کر رہا ہے، پاکستان کے جیکب آباد اور سبی جیسے شہروں میں اپریل 2022 کے آخر میں درجہ حرارت 47 ڈگری سینٹی گریڈ تک ریکارڈ کیا گیا۔

موسمیاتی تباہی کو ہیٹ ویو کی وجہ سمجھا جاتا ہے۔ موسمیاتی تبدیلیوں کی وجہ سے گرمی کی لہر زیادہ دیر تک جاری رہتی ہے، جس کا پانی اور خوراک کے ساتھ ساتھ صحت عامہ پر بھیانک اثر پڑتا ہے۔

 بین الاقوامی پینل آن کلائمیٹ چینج آئی پی سی سی کی موسمیاتی خصوصی رپورٹ میں پتا چلا ہے کہ عالمی درجہ حرارت کی انتہا تبدیل ہو رہی ہے۔ پاکستان اور بھارت میں گرمی کی لہروں کی تعداد اور شدت میں اضافہ متوقع ہے۔

انگلش میں خبریں پڑھنے کے لئےیہاں کلک کریں

ان دونوں ممالک میں لگ بھگ 1.5 بلین لوگ اس ہیٹ ویو سے متاثر ہیں، جس میں غریب ترین کمیونٹیز سب سے زیادہ متاثر ہیں۔

گرمی سے متعلق بیماریوں میں مبتلا افراد پہلے سے زیادہ ہسپتالوں پر اضافی دباؤ ڈال سکتے ہیں، خاص طور پر پاکستان میں جہاں بجلی کی لوڈ شیڈنگ سے پہلے ہی مشکلات کا سامنا کرنا پڑتاہے۔

گرمی کے اثرات

اندیشہ ہے کہ گرمی کی لہر غریب ترین اور عمررسیدہ افراد کو سب سے زیادہ متاثر کرے گی، خاص طور پر پاکستان میں، جہاں بجلی کی لوڈ شیڈنگ پہلے ہی مشکلات کا باعث بن رہی ہے۔ پاکستان کے شہری مراکز کو چھ سے دس گھنٹے تک لوڈ شیڈنگ کا سامنا ہے جبکہ دیہی علاقوں میں تقریباً 18 گھنٹے تک بجلی کی بندش رہتی ہے۔

پانی کی بے قاعدگی شہری آبادی کے لیے مسئلہ کو بڑھا دیتی ہے۔ ایئر کنڈیشنگ ممنوعہ طور پر مہنگا ہے، یہاں تک کہ دونوں ممالک میں متوسط آمدنی والے خاندانوں کے لیے۔ گرمی کی لہر کے نتیجے میں جانی نقصان ہو سکتا ہے۔

سرکاری اہلکار لوگوں کو غیر معمولی گرمی کی لہر کے خلاف احتیاطی تدابیر اختیار کرنے کی مشورہ دے رہے ہیں، خاص طور پر نوجوانوں اور بزرگوں کو، کہ وہ دن کے وقت غیر ضروری سفر سے گریز کریں۔

شہری علاقے اربن ہیٹ آئی لینڈ کے اثر کی وجہ سے ہیٹ ویو کے اثرات سے زیادہ خطرے میں ہیں۔ کراچی میں جون 2015 میں شدید گرمی کی لہر کے دوران 1,200 سے زائد افراد ہلاک اور 50,000 افراد گرمی کی بیماری میں مبتلا ہوئے تھے۔

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں