Wednesday, April 24, 2024

مفتی تقی عثمانی کا کہنا ہے کہ ریاست مخالف سرگرمیوں میں ملوث افراد ’باغی‘ ہیں

- Advertisement -

عالم دین مفتی محمد تقی عثمانی کےفتویٰ کے مطابق، ریاست پاکستان کے خلاف کوئی بھی فوجی سرگرمی “بغاوت” ہے، جو کہ اسلامی قانون کے مطابق “حرام “ہے۔

مفتی تقی عثمانی نے تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) کو “باغی” کہا جب وہ  بین الاقوامی اسلامی یونیورسٹی اسلام آباد کی فیصل مسجد کیمپس میں پیغام پاکستان نیشنل کانفرنس میں منعقد ہونے والی “پرتشدد انتہا پسندی، بنیاد پرستی اور نفرت انگیز تقاریر کا مقابلہ” کے موضوع پر خطاب کر رہے تھے۔

انگلش میں پڑھنے کے لئے یہاں کلک کریں

اجلاس میں موجود تمام مکاتب فکر کے علمائے کرام و مشائخ نے بھی متفقہ طور پر اس فتویٰ کی منظوری دی۔

مفتی تقی عثمانی کے مطابق، جو ایک گروپ کی قیادت کر رہے تھے اور کابل میں مذاکرات میں شریک تھے، افغان طالبان نے بھی ٹی ٹی پی کے ان ارکان سے ناراضگی کا اظہار کیا جو پاکستان میں دہشت گردی کی کارروائیوں میں مصروف تھے۔

انہوں نے کہا کہ جہاد کا قومی سلامتی کی خدمات کے خلاف لڑنے یا ریاست مخالف کارروائیوں میں ملوث ہونے سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

اسلامی نظریاتی کونسل کے چیئرمین ڈاکٹر قبلہ ایاز نے دعویٰ کیا کہ آرمی پبلک سکول میں ہونے والے المناک سانحہ نے دہشت گردی کے خطرے سے نمٹنے کے لیے پورے ملک کو اکٹھا کر دیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ حکومت نے علمائے کرام، مشائخ اور مذہبی ماہرین کے تعاون سے مواصلاتی خلاء کو ختم کرنے اور قوم میں امن و سکون کے لیے مذہبی تفریق کو ختم کرنے کے لیے “پیغام پاکستان” ایک متحدہ پروگرام تیار کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ’’پیغام پاکستان‘‘ کو مقامی سطح پر نافذ کرنے کے لیے پارلیمنٹ کو آئینی تحفظ فراہم کرنا چاہیے۔

سیاسی عدم استحکام

بین المذاہب ہم آہنگی اور مشرق وسطیٰ کے لیے وزیر اعظم کے خصوصی نمائندہ حافظ محمد طاہر محمود اشرفی کے مطابق، سیاسی عدم استحکام ملک کی معاشی تباہی کی ایک اہم وجہ ہے۔

انہوں نے میڈیا سے کہا کہ وہ ذمہ داری کا مظاہرہ کریں اور جعلی خبریں شائع کرنے یا نشر کرنے سے گریز کریں کیونکہ اس سے تجارتی سرگرمیوں پر منفی اثر پڑتا ہے۔

انہوں نے دعویٰ کیا کہ جہاں بعض افراد انتشار پھیلانے کی کوشش کر رہے ہیں،وہاں  علمائے کرام اور مشائخ نے امن و سلامتی کے خلاف مخالفین کے منصوبوں کو ناکام بنانے کے عزم کو دہرایا ہے۔

مرکزی رویت ہلال کمیٹی کے چیئرمین مولانا سید محمد عبدالخبیر آزاد نے کہا کہ ’’پیغام پاکستان‘‘ نے ملک کو اکٹھا کیا ہے اور اس کی ترقی اور خوشحالی میں مثبت کردار ادا کر رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ علمائے کرام اور مشائخ دشمن کے مقاصد کی مخالفت کر رہے تھے اور پاک فوج اور دیگر سکیورٹی اداروں کے ساتھ کھڑے تھے۔

سابق وزیر برائے مذہبی امور حامد سعید کاظمی نے کہا کہ نوجوانوں کے ذہنوں میں زہر گھولنے والے “ماسٹر مائنڈز” کو تلاش کرنے کے لیے سب کو مل کر کام کرنے کی ضرورت ہے۔

علامہ افتخار نقوی کے مطابق، “پیغامِ پاکستان” نتیجہ خیز اثرات پیدا کر رہا ہے اور اسے پوری قوم میں وسیع پیمانے پر عام کرنے کی ضرورت ہے۔

مفتی تقی عثمانی نے عمران خان کو تنقید کا نشانہ بنایا

انہوں نے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے رہنما عمران خان پر تنقید کی کہ وہ اقتدار پر قبضہ کرنے کی کوشش میں معاشرے میں تفریق کو ہوا دے رہے ہیں۔

ضیاء اللہ شاہ بخاری کے مطابق سوشل میڈیا پر فرقہ واریت کو فروغ دینے والے کئی عوامل ہیں جنہیں بات چیت یا دیگر قانونی اقدامات کے ذریعے روکا جا سکتا ہے۔

مولانا فضل الرحمان خلیل کے مطابق ہمیں پاکستان اور افغانستان میں علمائے کرام کے درمیان خلیج کو ختم کرنے کے لیے پرعزم کوششیں کرنی چاہئیں۔

علامہ حسین اکبر کے مطابق، “پیغامِ پاکستان” کو ملک بھر کے سکولوں میں پڑھایا جانا چاہیے۔

اسے نچلی سطح پر مزید نافذ کرنے کے لیے، انہوں نے ملک بھر کے مقامی حکومتی اداروں کو “پیغام پاکستان” کی ایک نقل دینے کی تجویز دی۔

ڈاکٹر عطا الرحمان، ڈاکٹر راغب نعیمی، علامہ توقیر عباس، مفتی گلزار احمد نعیم، مفتی نعمان نعیم، پیر سید علی رضا، مفتی منیب الرحمان، قاری محمد حفیظ جالندھری، حامد الحق حقانی، محمد عادل عطاری، پیر چراغ الدین شاہ، مولانا محمد علی نے خطاب کیا۔

اسی مصنف کے اور مضامین
- Advertisment -

مقبول خبریں